عراق پابندیوں کے باوجود ایران سے تعلقات بڑھانے کیلئے پُرعزم ہے: عراقی رہنما

بغداد، 14 جنوری، ارنا - نامور عراقی سیاسی رہنما اور حکمت سیاسی تحریک کے سربراہ نے امریکہ کے یکطرفہ اقدامات پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ایران مخالف امریکی پابندیوں کے باوجود ایران کے ساتھ تعلقات بڑھانے کیلئے عراق کے عزم و ارادہ مزید مضبوط ہوں گے.

یہ بات 'سید عمار حکیم' نے عراقی دارالحکومت بغداد میں ایرانی وزیرخارجہ 'محمد جواد ظریف' اور ان کے ہمراہ اعلی سطحی وفد کے ساتھ ایک ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کہی.
انہوں نے کہا کہ ایران ہمیشہ عراق کے ساتھ کھڑا ہے اسی لیے ہم امریکہ کی ایران مخالف ظالمانہ پابندیوں کے مخالف ہیں.
عمار حکیم نے ایران اور عراق کے درمیان گہرے تعلقات کا ذکر کرتے ہوئے دونوں ممالک کے درمیان سیاسی، اقتصادی اور ثقافتی کے شعبوں میں باہمی تعلقات کو مزید فروغ دینے کی ضرورت پر زور دیا.
انہوں نے بتایا کہ عراق میں داعش کے خاتمے کے لیے ایران کا کردار ناقابل انکار ہے.
اس موقع میں ایرانی وزیر خارجہ نے عراق کی سالمیت اور امن کے تحفظ کے لیے عمار حکیم جیسے عراقی سیاسی رہنماوں کے کردار پر شکریہ ادا کیا.
ایرانی وزیر خارجہ نے گزشتہ روز ایک اعلی وفد کی قیادت میں عراق کے 4 روزہ دورے پر روانہ ہوگئے.
یہ بات قابل ذکر ہے کہ محمد جواد ظریف اس وقت ایک اعلی سطحی سیاسی اور تجارتی وفد کی قیادت میں عراق کے چار روزہ دورے پر ہیں.
ظریف بغداد میں اعلی عراقی قیادت سے ملاقاتوں کے علاوہ اربیل، سلیمانیہ، کربلا اور نجف اشرف بھی جائیں گے جہاں وہ مختلف حکام کے ساتھ ملاقات اور مشترکہ تجارتی نشست میں شریک ہوں گے.
اسلامی جمہوریہ ایران عراق کا ایک اہم تجارتی پارٹنر ہے اور موجودہ صورتحال میں پڑوسی ممالک کے درمیان ایران عراق کو مصنوعات کی برآمدات کرنے والا سب سے بڑا ملک ہے.
9410*274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@