ایرانی حکام امریکہ اور یورپ کی دھمکیوں کا مقابلہ کریں: آیت اللہ خامنہ ای

تہران، 9 جنوری، ارنا - ایرانی سپریم لیڈر نے ملکی حکام پر زور دیا ہے کہ امریکی اور یورپی حکمرانوں کی گیدڑ بھبکی اور ہرزہ سرائیوں کا ڈٹ کر مقابلہ کریں کیونکہ نہ صرف ان کی دہمکیاں کھوکھلی ہیں بلکہ مغرب کے وعدوں میں بھی کوئی صداقت نہیں ہے.

ان خیالات کا اظہار قائد اسلامی انقلاب حضرت آیت اللہ العظمی ''سید علی خامنہ ای'' نے بدھ کے روز ایران کے مذہبی شہر قم سے تعلق رکھنے والے ہزاروں افراد کے ساتھ ایک ملاقات میں خطاب کرتے ہوئے کیا.
اس موقع پر قائد انقلاب نے بعض مغربی حکمرانوں کے بے بنیاد بیانات کو مسخروں کی باتوں سے تشبیہ دی اور فرمایا کہ ایرانی حکام امریکی اور یورپی حکمرانوں کی ہرزہ سرائیوں کے مقابلے سے پیچھے نہ ہٹیں بلکہ ان کا ڈٹ کر مقابلہ کریں.
انہوں نے مزید فرمایا کہ ملکی حکام یہ جان لیں کہ مغربی حکمرانوں کی دھمکیوں میں تو تو کوئی حقیقت ہے اور نہ ہی ان لوگوں کے وعدے اور معاہدوں پر کئے گئے دستخط میں کوئی صداقت ہے.
حضرت آیت اللہ خامنہ ای نے مزید فرمایا کہ امریکہ کی ایران دشمنی کی اصل وجہ اسلامی انقلاب، قومی کی بہادری، نظام سے وفاداری اور انقلاب کے مقاصد پر مخلص ہونا ہے.
انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ اس نازک صورتحال میں حکام اور عوام پر بھاری ذمہ داری عائد ہوتی ہے. عوام کو درپیش معاشی مشکلات کا خاتمہ بالخصوص کمزور طبقے کی دیکھ بھال حکام کی ترجیح ہونی چاہئے.
قائد اسلامی انقلاب نے فرمایا کہ عوام اور حکام ہوشیار رہیں اور آٹھ سالہ مسلط کردہ جنگ کے دوران امریکی پابندیوں کو شیطان بزرگ کے لئے ایک تاریخی شکست میں بدلیں.
انہوں نے مزید فرمایا کہ گزشتہ سال ایک امریکی رہنما نے دہشتگرد عناصر کے اجتماع میں ان سے وعدہ کیا تھا کہ وہ نئے عیسوی سال 2019 کا جشن تہران میں منائیں گے. ایک دور میں صدام نے بھی یہ امید کی تھی کہ وہ ایک ہفتے کے اندر تہران پہنچے گا جبکہ منافقین گروہ کے عناصر نے بھی یہ خیال کیا تھا کہ مرصاد واقعے میں وہ تین دن کے اندر کرمانشاہ سے تہران پہنچیں گے.
ایرانی سپریم لیڈر نے فرمایا کہ بعض امریکی حکمران اپنے آپ کو پاگل ظاہر کرتے ہیں تاہم میں اس بات کو تسلیم نہیں کرتا بلکہ میں سمجھتا ہوں کہ امریکی حکمران حقیقت میں نمبر ون بے وقوف ہیں.
انہوں نے ایران کی مضبوط معاشی پوزیشن پر بعض مغربی تحقیقاتی مراکز کے اعتراف کا ذکر کرتے ہوئے مزید فرمایا کہ یہ خود مغرب کی کہی ہوئی بات ہے کہ ایران کے پاس موجود غیرمعمولی صلاحیت نے اسے دنیا کے پانچویں بڑے امیر ملک میں تبدیل کیا ہے، لہذا یہ معمول کی بات ہے کہ ایران جیسے امیر ملک پر حاوی نہ ہونے کی وجہ سے وہ غصے میں ہیں.
آیت اللہ خامنہ ای نے فرمایا کہ اللہ کی مدد، عوام کی مزاحمت اور حکام کی جد و جہد سے پابندیوں اور مشکلات پر قابو پالیں گے.
انہوں نے مزید فرمایا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کی کامیابی اور پائندگی جاری رہے گی جبکہ امریکہ اور مغرب میں موجود ایرانی دشمنوں کا انجام صدام جیسا ہوگا.
274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@