چابہار معاہدہ، ایران اپنے تمام وعدوں پر من و عن عمل کررہا ہے

تہران، 2 جنوری، ارنا - ایرانی پورٹس اور شپنگ اتھارٹی کے سربراہ نے کہا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران چابہار سہ فریقی معاہدے میں اپنے تمام وعدوں پر من و عن عمل کررہا ہے.

یہ بات "محمد راستاد" نے ایران میں تعینات بھارتی سفیر "سوراب کمار" کے ساتھ ایک ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کہی.
انہوں نے کہا کہ ایران، چابہار معاہدے میں اپنے تمام وعدوں پر قائم ہے اور ہمیں امید ہے کہ بھارتی کمینی کی سرگرمیوں کے آگاز سے چابہار بندرگاہ میں بڑی شپنگ کمپنیوں کی موجودگی کے لئے مواقع فراہم ہوں.
سنیئر ایرانی عہدیدار نے چابہار میں بھارتی کمپنی آی پی جی ایل کی باضابطہ سرگرمیوں کے آغاز پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ بھارتی کمپنی کی سرگرمیوں کا ایک مقصد چابہار بندرگاہ میں مارکیٹنگ، مصنوعات اور کارگو ٹریفک میں اضافہ کرنا ہے.
نائب ایرانی وزیر سڑک اور شہری ترقی نے کہا کہ "یوم چابہار" کے عنوان سے عالمی اجلاس 26 فروری کو چابہار بندرگاہ میں منعقد ہوگا جس میں تمام سرگرم گروہوں کے نمائندے شریک ہوں گے لہذا اس فورم کے ذریعے بھارتی کمپنی کو چاہئے کہ سرمایہ کاروں کو راغب کرنے کے لئے چابہار کی اعلی صلاحیتیں کو اجاگر کرے.
انہوں نے کہا کہ یوم چابہار کا آئندہ اجلاس ایران، افغانستان اور بھارت سمیت عالمی اور قومی شپنگ لائن کے لئے ایک سنہری موقع ہے جبکہ سہ فریقی معاہدے کا ایک اہم مقصد چابہار بندرگاہ میں بڑی شپنگ کمپنیوں کی موجودگی میں اضافہ کرنا ہے.
انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران، بھارت اور افغانستان کے درمیان باہمی اقتصادی تعلقات کو فروغ دینا ہمارے لئے بہت ہی اہم ہے اور اس حوالے سے چابہار بندرگاہ کی اعلی صلاحیتوں کا استعمال کرنا بہت ہی موثر ہے.
بھارتی سفیر نے کہا کہ ہم نے دونوں ممالک کے درمیان اقتصادی اور تجارتی تعلقات سمیت چابہار کی ترقی کے لئے سنجیدہ اقدامات اٹھائے ہیں.
یاد رہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران، بھارت اور افغانستان نے 24 اکتوبر چابہار بندرگاہ میں ٹرانزٹ تعاون کے معاہدے پر دستخط کردئے.
یہ بات قابل ذکر ہے کہ ایرانی، بھارتی اور افغان صدور نے گزشتہ دو سال میں چابہار ٹرانزیٹی باہمی تعاون کے معاہدے پر دستخط کردئے جس کے ذریعہ ایشیا کے جنوب مشرقی اور وسطی ایشیا کے ممالک، روس، قفقاز، بحیرہ عمان اور اینڈین اوشن کے تمام ممالک کے درمیان تجارتی تبادلوں کی سہولیات فراہم ہوگی.
9393*274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@