ایران میں اقلیتی برداری مکمل آزادی سے جی رہی ہے: ایرانی عیسائی رہنما

اصفہان، 1 جنوری، ارنا – ایرانی کے عیسائی رہنما نے کہا ہے کہ مغربی میڈیا کے منفی پروپیگینڈے کے برعکس ایران میں تمام الہامی ادیان کے پیروکار مکمل آزادی کے ساتھ اپنی زندگی گزار رہے ہیں.

یہ بات اصفہان کے آرچ بشپ "سیپان کاشاچیان" نے منگل کے روز ارنا نیوز ایجنسی کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی.
اس موقع پر انہوں نے کہا کہ ہم لبنان، شام اور کینیڈا میں عیسائی رہنماء کے طور پر سرگرم عمل تھے مگر صرف اسلامی جمہوریہ ایران میں مذہبی اقلیت آزادی سے زندگی گزار رہے ہیں.
کاشاچیان نے مغربی دشمن میڈیا کی جانب سے ایران مخالف پروپیگینڈے کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ان کی ایسی سازشوں کی اصلی وجہ یہ ہے کہ ایرانی حکام طاقتور سامراجیوں پر انحصار کرنا نہیں چاہتے ہیں.
انہوں نے مزید کہا کہ امید ہے کہ نئے عیسوی سال میں دنیا کے تمام عوام ہوشیاری کے ساتھ اسلامی جمہوریہ ایران کے حوالے سے غور کریں.
انہوں نے کہا کہ ایران میں عیسائیوں اور مسلمانوں کے درمیان اچھے تعلقات قائم ہیں اور جاری رکھیں گے.
عیسائی رہنماء نے کہا کہ ایران میں بسنے والے الہامی ادیان کے پیروکار دوسرے ایرانی شہریوں کی طرح برابر شہری حقوق سے لطف اندوز ہونے کے علاوہ اپنی خصوصی مذہبی تقاریب اور روایات پر آزادی کے ساتھ عمل کر رہے ہیں.
انہوں نے مزید بتایا کہ ہمیشہ ایران کی سرزمین میں تمام الہامی ادیان کے پیروکاروں بشمول مسلمانوں، عیسائیوں اور یہودیوں ایک دوسرے کے ساتھ دوستی اور محبت سے زندگی بسر کر رہے ہیں.
انہوں نے کہا کہ ارمنی عیسائی صدیوں سے ایران میں امن و آشتی کے ساتھ زندگی گذار رہے ہیں اور ایران کو اپنے لئے ایک پُرامن پناہ گاہ سمجھتے ہیں.
تفصیلات کے مطابق، ایرانی صوبے اصفہان میں سات ہزار ارمنی عیسائی زندگی بسر کر رہے ہیں.
9393*274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@