ایران پر یورپی شرائط لاگو کئے جانے کی خبریں بے بنیاد ہیں: قاسمی

تہران، 31 دسمبر، ارنا - ایرانی دفترخارجہ کے ترجمان نے یورپ کے مخصوص مالیاتی میکنزم SVP سے متعلق اسلامی جمہوریہ ایران پر مخصوص شرائط لاگو کرنے کی خبروں کو مسترد کردیا ہے.

''بہرام قاسمی'' نے اپنے ایک بیان میں مزید کہا کہ ایس وی پی نظام سے متعلق یورپی یونین اور تین یورپی ملکوں کی طرف سے ایران کے لئے نئی شرائط متعارف کرنے کی باتوں میں کوئی صداقت نہیں ہے.
انہوں نے کہا کہ یورپی ممالک کا ایران سے تعاون دیرینہ ہے اور انھیں ایران کی غیرمعمولی صلاحیت کا علم ہے.
قاسمی نے بتایا کہ آج دنیا میں کوئی ایسا ملک نہیں جسے اسلامی جمہوریہ ایران کے مقام کا پتہ نہ ہو لہذا ہم کسی کو اجازت نہیں دیں گے کہ وہ ایران کے لئے شرائط مقرر کرے.
ان کا کہنا تھا کہ ایران کے لئے یورپ کے مخصوص مالیاتی نظام ایس وی پی کو درپی مشکلات کی اصل وجہ امریکی دباؤ کے سامنے یورپ کی بے بسی اور مالیاتی نظام کی پیچیدگی ہے.
انہوں نے مزید کہا کہ اگر یورپ کے اس مالیاتی نظام کو دنیا کے کسی بھی ملک میں نافذ کرنا ہو تو اس کی پیچیدگی کی وجہ سے کافی وقت لگے گا.
بہرام قاسمی نے ایس وی پی نظام سے متعلق یورپ کی جانب سے تاخیر پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں اب بھی امید ہے کہ یورپ اپنے وعدوں پر عمل کرے گا تاہم ایران دوسرے آپشن پر کام کررہا ہے جبکہ ہم کسی تشہیری مہم کے بغیر مختلف ممالک بشمول چین، روس، بھارت اور ترکی کے ساتھ مالیاتی لین دین پر کام کررہے ہیں.
انہوں نے مزید کہا کہ یورپی نظام کا نفاذ تعطل کا شکار ہے جبکہ بدقسمتی سے یورپی ممالک پر امریکی دباؤ کی سطح میں اضافہ ہوگیا ہے مگر اس کے باوجود ہمیں امید ہے کہ تاخیر کے باوجود یورپ مخصوص مالیاتی میکنزم کے نفاذ کے لئے موثر اقدامات اٹھائے گا.
قاسمی نے اس بات پر زور دیا کہ یورپی ممالک کو چاہئے کہ امریکی دباو اور غیرقانونی مطالبات کے سامنے اپنی ساکھ کا دفاع کریں.
ترجمان دفترخارجہ نے ڈونلڈ ٹرمپ کے حالیہ عراق کے خفیہ دورے پر تبصرہ کرتے ہوئے اس امید کا اظہار کیا کہ وائٹ ہاؤس منطقی رویے کے ساتھ ہوش کا ناخن لے تا کہ خطے اور دنیا میں مسائل میں کمی واقع ہو.
انہوں نے مزید کہا کہ ٹرمپ کا خفیہ دورہ عراق عراق کی قومی خودمختاری کی خلاف ورزی اور عرای عوام کی توہین کے مترادف ہے.
بہرام قاسمی نے بتایا کہ آج ہم دیکھ رہے ہیں کہ امریکہ اب مزید اس خطے میں نہیں رہ سکتا اور نہ ہی یہاں اس کے لئے کوئی جگہ ہے.
انہوں نے مزید کہا کہ شام سے انخلاء کے بعد آئندہ امریکی حکمت عملی یا افغانستان سے نکلنے سے متعلق امریکی قیادت کے متنازع بیانات میں ابہام ہے تاہم خطے کی موجودہ صورتحال کے پیش نظر اور تمام مشکلات کے باوجود یہاں امریکہ کے لئے کوئی جگہ نہیں ہے.
ایرانی ترجمان نے کہا کہ امریکہ کو اپنا گھر واپس جانا چاہئے اور بجائے اس کے کہ کھربوں ڈالر خرچ کرے تعمیری سوچ اپنائے کہ وہ کس طرح خطے اور دنیا کے عوام بالخصوص امریکی قوم کے لئے مثبت قدم اٹھاسکتا ہے.
274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@