شام اور یمن کی تباہی میں امریکی کردار

اسلام آباد، 28 دسمبر، ارنا - پاکستان کے مشہور اردو اخبار ''ایکسپریس'' نے کہا ہے کہ شام اور یمن کی تباہی میں امریکہ کا بڑا ہاتھ ہے جس کا مقصد خطے میں صہیونیوں کے مفادات کو تحفظ فراہم کرنا ہے.

ایکسپریس نے جمعہ کے روز اپنے ایک اداریہ میں لکھا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ تباہ شدہ ملک شام کی تعمیرنو کے لیے امریکہ نہیں بلکہ سعودی عرب اخراجات ادا کرے گا حالانکہ غور کیا جاتے تو یہ واضح ہوتا ہے کہ شام کی تباہی میں امریکی کا سب سے زیادہ ہاتھ ہے. یہ پینلٹی امریکہ پر ڈالنے کی کوشش کی گئی تھی مگر امریکی صدر نے فوری طور پر اپنا دامن چھڑانے کے لیے ٹویٹ کر دی جس میں کہا گیا تھا کہ کیا یہ بہتر نہیں کہ علاقے کے مالدار ملک شام کی تعمیر نو میں مدد کریں نہ کہ پانچ ہزار میل دور واقع امریکہ پر یہ ذمے داری ڈالی جائے. رپورٹ کے مطابق یمن کے علاوہ دیگر کئی افریقی ملکوں میں بھی قحط سالی کا خطرہ ہے. علاوہ ازیں ہیضہ اور دیگر ہلاکت خیز امراض بھی پھیل رہے ہیں جب کہ صرف یمن میں 2 کروڑ بچے زندگی و موت کی کشمکش میں مبتلا ہیں. ہر روز ہزاروں بچے ان متعدی بیماریوں کا شکار ہو رہے ہیں. مفصل رپورٹ میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ جنگ عظیم کے بعد جاپان اور جرمنی کی حالت بھی انتہائی ناگفتہ بہ ہو گئی تھی مگر یورپ اور امریکہ کے مارشل پلان کی وجہ سے یہ دونوں ممالک نہ صرف اپنے پیروں پر کھڑے ہوئے بلکہ ترقی یافتہ ملک بھی بن گئے. پاکستانی اخبار نے کہا کہ شام اور یمن میں امریکہ اور مغربی یورپ نے منفی کردار ادا کیا ہے،ان ممالک کی تباہی کے ساتھ ساتھ عراق اور لیبیا کو برباد کیا گیا، اس کا بنیادی مقصد اسرائیل کو محفوظ بنانا تھا. 274** ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@