ٹرمپ کا خفیہ دورہ عراق قومی خودمختاری کی خلاف ورزی ہے: ایران

تہران، 28 دسمبر، ارنا - اسلامی جمہوریہ ایران نے ڈونلڈ ٹرمپ کے عراق کے خفیہ دورے پر کڑی تنقید کرتے ہوئے اسے سفارتی آداب کے منافی اور عراق کی قومی خودمختاری کی خلاف ورزی قرار دیا ہے.

ترجمان دفترخارجہ ''بہرام قاسمی'' نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ علاقائی اقوام اور ممالک اغیار اور جارحیت کرنے والوں کو خطی ممالک کے درمیان تفرقہ ڈالنے کی ہرگز اجازت نہیں دیں گے.
انہوں نے ڈونلڈ ٹرمپ کے مداخلت پر مبنی بیانات کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ خطے میں امریکی مداخلت، جارحیت اور کھربوں ڈالر خرچ کرنے کے باوجود آج ٹرمپ خطے کا خفیہ طور پر دورہ کرنے پر مجبور ہے.
قاسمی نے مزید کہا کہ امریکہ جو ہمیشہ دعوی کرتا چلا آرہا ہے اور اس نے دہشتگردی کی بھی خوب حمایت کی ہے، خطے میں دہشتگردوں کو شکست دینے میں کچھ نہیں کیا بلکہ علاقائی قوموں نے صحیح وقت میں امریکی صہیونی سازشوں کو سمجھتے ہوئے دہشتگردی کی لعنت پر قابو پالیا.
انہوں نے کہا کہ جلد یا بدیر اغیار اور غیرعلاقائی فورسز اس خطے سے نکلنے پر مجبور ہوں گے اور علاقائی ممالک بھی اس نتیجے پر پہنچیں گے کہ خطی مسائل کا حل صرف اسی خطے میں ممکن ہے.
ایرانی ترجمان دفترخارجہ نے امریکی صدر کو تجویز دی ہے کہ وہ عالمی تبدیلیوں بالخصوص مغربی ایشیا کی صورتحال پر غور کریں تا کہ انھیں آئندہ کے لئے اچھا سبق ملے.
274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@