جزیرہ کیش کے زیرزمین سیاحتی مقام کاریز پر ایک جھلک

تہران، 12 دسمبر، ارنا – ایران کے جنوبی جزیرے کیش کو مشرق وسطی کے اہم سیاحتی مراکز میں شمار کیا جاتا ہے جو آج دن موسم سرما میں دنیا کے سیاح اس کی سیر سے لطف اندوز ہو رہے ہیں.

ایرانی جزیرے کیش کے خوبصورت مقامات کے بغیر اس میں ' کاریز' نامی 2500 سالہ زیر زمین شہر خلیج فارس کے سب سے خوبصورت سیاحتی مرکز ہے. کاریز زیر زمین شہر زمین سے 15 میٹر کی گہرائی ہے جو کھدائی کرنے والوں کی تحقیقات کے مطابق، کاریز کی دیواروں پر موجودہ سمندری طرازی اور مرجان کی قدمت 270 سے لے کر 570 ملین سال تک ہے. "منصور حاجی زادہ" اس زیر زمین شہر کی سرمایہ کار اور منیجنگ ڈائریکٹر ہیں جو 30 سالوں سے زائد جرمنی میں رہتے تھے جنہوں نے گزشتہ سالوں کے دوران اس شہر کی بنیادی ڈھانچے کا جائزہ کرتے ہوئے اس کی از سر نو تعمیر کی. آج دن ایران کے جنوبی جزیرے کیش میں 2500 سالہ زیر زمین شہر کاریز دنیا کے اہم سیاحتی مراکز میں سے ایک ہے. گزشتہ زمانوں کے دوران تقریبا 9 صدی پہلے جزیرے کیش خلیج فارس اور بحیرے عمان کا اہم تجارتی مرکز تھا جو اس کا پانی پھینے خلیج فارس کے تمام ممالک کو بھیج دیا گیا ہے. کاریز سرنگوں کی چھت پر جیواشم موجود ہیں ان میں سے ایک کچھی جیواشم ہے جس کی قدمت 570 ملین سال سے زائد ہے. جنوبی جزیرے کیش کے زیر زمین شہر کاریز اپنی تاریخی قدمت کی وجہ سے دنیا میں سب سے خوبصورت عمارات میں سے ایک ہے. جزیرے کیش کا کل رقبہ 91 مربع کلومیٹر ہے جو اپنے دلکش سیاحتی مقامات کے ساتھ سالانہ دو ملین سے زائد ملکی اور غیر ملکی سیاحوں کو اپنی طرف سے متوجہ کر رہا ہے. 9393*274** ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@