انسداد منشیات پر ایران کیساتھ تعاون کو بڑھانا ہماری پہلی ترجیح ہے: پاکستانی کمانڈر

اسلام آباد، 11 دسمبر، ارنا - پاکستان کی انسداد منشیات فورس کے سربراہ نے کہا ہے کہ منشیات کی روک تھام سے متعلق پاکستان کے اسلامی جمہوریہ ایران سے تعاون کو فروغ دینا ہماری پہلی ترجیح ہے.

یہ بات میجر جنرل ''محمد عارف ملک'' نے منگل کے روز اسلام آباد میں ایرانی میڈیا کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی.
یہ انٹرویو پاکستان کی میزبانی میں انسداد منشیات پر ایران، پاکستان اور افغانستان کہ سہ فریقی نشست کے موقع پر ہوا.
انہوں نے مزید کہا کہ انسداد منشیات پر ایران، پاکستان اور افغانستان کے سہ فریقی تعاون عمل اہم ہے اور اس مقصد کے لئے ہم ایران کے ساتھ تعاون کو مزید بڑھانے کے لئے بھی پُرعزم ہیں.
پاکستانی کمانڈر کا کہنا تھا کہ سہ فریقی اجلاس کا مقصد منشیات کی اسمگلنگ کی روک تھام کے لئے تینوں ممالک کے درمیان تعاون اور اقدامات کو مزید بڑھانا ہے.
انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ایران، پاکستان اور افغانستان کے درمیان انٹیلی جنس شیئرنگ کو مزید بڑھانا ہوگا کیونکہ اس کے ذریعے ہم نہ صرف انسداد منشیات کے مشترکہ تعاون کو مضبوط کرسکتے ہیں بلکہ ان کاروائیوں میں ملوث عناصر کا بہتر انداز میں تعاقب کرسکتے ہیں.
میجر جنرل عارف ملک کے مطابق، منشیات کی روک تھام کے حوالے سے پاکستان اور افغانستان سرحدوں پر مشترکہ پٹرولینگ کرتے ہیں اور اسی طرح پاکستان ایران کے ساتھ مشترکہ پٹرولینگ کو مزید بڑھانے کا خواہاں ہے.
انہوں نے مزید کہا کہ اس اجلاس کے اختتام پر پاکستان ایک تجویز پیش کرے گا جس کے مطابق ایران میں قائم جائنٹ پلاننگ سیل کی مزید شاخیں پاکستان اور افغانستان میں بھی کھولی جائیں جس میں تینوں ممالک کے افسران موجود ہوں تا کہ مشترکہ تعاون کو مزید بہتر کیا جاسکے.
274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@