پاکستان میں انسداد منشیات پر سہ فریقی اجلاس، ایران کی شرکت

اسلام آباد، 11 دسمبر، ارنا - حکومت پاکستان کی میزبانی میں منشیات کی روک تھام کے بارے میں ایران، پاکستان اور افغانستان کی سہ فریقی نشست کے 13ویں دور کا آغاز ہوگیا ہے جس میں ایران کی انسداد منشیات فورس کے سربراہ بھی شریک ہیں.

تفصیلات کے مطابق، پاکستان کی وزارت انسداد منشیات سہ فریقی نشست کی میزبانی کررہی ہے اور یہ اجلاس دو روز تک جاری رہے گا.
اس اجلاس میں اسلامی جمہوریہ ایران کی انسداد منشیات پولیس فورسز کے سربراہ بریگیڈیر جنرل ''محمد مسعود زاہدیان''، پاکستان اور افغانستان کے اعلی افسران شریک ہیں.
اقوام متحدہ کے ادارہ انسداد منشیات اور منظم جرائم کا ایک وفد بھی اس اجلاس میں شرکت کررہا ہے.
یہ تینوں ممالک کی 13ویں مشترکہ نشست ہوگی. اس نشست کے ذریعے تینوں ملکوں کو ایک جامع اور متوازن سوچ کے ذریعے مشترکہ مسائل کاحل تلاش کرنے میں مدد ملے گی.
اس سے پہلے ایران، پاکستان اور افغانستان کی حکومتوں نے افغانستان سے منشیات کی اسمگلنگ کی موثر روک تھام کے لئے مشترکہ منصوبہ بندی سیل اورسرحدی روابط کے قیام کے ذریعے معلومات کے تبادلے اورمنشیات کی سمگلنگ کی روک تھام کی کارروائیاں کرنے پر اتفاق کیا ہے.
ایرانی وفد کے سربراہ بریگیڈیر جنرل محمد مسعود زاہدیان نے اس موقع پر ارنا نیوز کے نمائندے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ تینوں ممالک کے درمیان جائنٹ پلاننگ سیل قائم ہے جس کا مقصد حساس انفارمیشن کے تبادلے اور مشترکہ آپریشن کے لئے تعمیری تعاون کرنا ہے.
انہوں نے مزید کہا کہ اسلام آباد کے اجلاس میں مشترکہ پلاننگ سیل کی کارکردگی کا جائزہ لیا جائے گا.
بریگیڈیر جنرل زاہدیان نے کہا کہ دنیا میں منشیات کی وجہ سے ایران، پاکستان اور افغانستان کو سب سے زیادہ نقصان پہنچا ہے لہذا تینوں ممالک کو چاہئے کہ ایک دوسرے کے تجربات کا استفادہ کرکے ان مسائل کو بہتر انداز میں مقابلہ کریں.
274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@