افغانستان میں امن کی واپسی پر ایران کا کردار نہایت اہم ہے: امریکی کالم نگار

نیو یارک، 10 دسمبر، ارنا - سنیئر امریکی صحافی اور کالم نگار نے کہا ہے کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان باہمی اعتماد کی بحالی اور ان کے ساتھ مل کر افغانستان میں امن کی واپسی سے متعلق اسلامی جمہوریہ ایران کو اہم مقام حاصل ہے.

یہ بات ''کون ہیلینان'' جو 'فارن پالیسی ان فوکس' ویب سائیٹ کے سنیئر کالم نگار ہیں، نے ارنا نیوز کے نمائندے کو خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے کہی.
ان کا کہنا تھا کہ افغان مسئلے کا حل علاقائی ممالک کے درمیان قریبی تعاون پر منحصر ہے.
انہوں نے مزید کہا کہ ایران پاکستان اور بھارت کے درمیان اعتماد کی بحالی میں مدد کرسکتا ہے اور ان دونوں ممالک کے ساتھ مل کر افغانستان میں عوام کی مشکلات کے خاتمے کے لئے بھی اہم کردار ادا کرسکتا ہے.
نامور امریکی صحافی نے افغانستان سے متعلق وائٹ ہاؤس کی پالیسی پر کڑی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ افغانستان ہرگز امریکہ کے لئے سیکورٹی رسک یا خطرہ نہیں تھا.
انہوں نے افغانستان اور وسطی ایشیا میں قیام امن و سلامتی کے لئے علاقائی ممالک کی جانب سے تعمیری کردار ادا کرنے پر زور دیا اور کہا کہ اگر امریکہ چاہتا ہے کہ افغانستان میں امن قائم ہو تو اس مقصد کے لئے ایرانی کردار ناگزیر ہے.
کون ہیلینان نے کہا کہ برلن اجلاس کے موقع پر ایرانی کی کوششوں کے ذریعے طالبان حکومت کے خاتمے کے بعد افغانستان میں پہلی حکومت کے قیام عمل میں لایا گیا.
انہوں نے مزید کہا کہ سابق امریکی صدر جارج بش نے ایران کو نظرانداز کرتے ہوئے دعویٰ کیا تھا کہ ایران شرانگیزی کا مرکز ہے لہذا میں سمجھتا ہوں کہ اگر ٹرمپ انتظامیہ نے یہ غلطی دہرائی تو افغانستان میں جنگ کے خاتمے کے لئے کوئی امید نہیں رہے گی.
کون ہیلینان نے پاکستان اور امریکہ کے درمیان تعاون کو مثبت قرار دیتے ہوئے کہا کہ ٹرمپ انتظامیہ کے ساتھ تناو کے باوجود پاکستان بھی افغانستان میں جنگ کے خاتمے کا خواہاں ہے.
انہوں نے مزید کہا کہ افغانستان کے آئندہ حالات میں ایران، چین، روس اور پاکستان کے کردار نہایت اہم ہے، مسئلہ افغانستان کا حل علاقائی تعاون سے ممکن ہے اور صرف خطی ممالک ہی ان مسائل کے خاتمے کے لئے کردار ادا کرسکتے ہیں.
274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@