ٹرمپ کا اینٹی ایران اتحاد بکھرنے کے قریب

تہران، 8 دسمبر، ارنا – امریکہ میں ایرانیوں کی قومی کونسل کے سربراہ نے ایران مخالف امریکی پالیسی کی شسکت کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ ٹرمپ کے سعودی عرب اور صہیونیوں پر مشتمل اینٹی ایران اتحاد بکھرنے کے قریب آگیا ہے.

یہ بات "تریتا پارسی" نے امریکی نیوز ویب سائیٹ این بی سی میں شائع ہونے والے اپنے ایک مضمون میں کہی.
انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران پر دباؤ ڈالنے سے متعلق ڈونلڈ ٹرمپ کی پالیسی کو یکے بعد دیگر شکست ہورہی ہے.
پارسی نے سعودی نقاد جمال خاشقجی کے قتل پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ اس واقعے کے بعد امریکہ سعودی تعلقات میں نیا بحران پیدا ہوا کیونکہ خاشقجی کے قتل کا حکم سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے دیا تھا جن کی حفاظت امریکی اینٹلی جنس ادارہ کررہا ہے.
انہوں نے مزید کہا کہ امریکہ اور سعودی عرب یمن کے خلاف جنگ، انسانی اور خواتین کے حقوق کی خلاف ورزی اور سعودی تیل کی پیداواری کی کمی پر ایک دوسرے کا ساتھ دے رہے ہیں.
انہوں نے کہا کہ ناجائز صہیونی ریاست ایران کے خلاف امریکی پالیسی میں اہم کردار ادا کر رہی ہے جبکہ صہیونی وزیر اعظم نیتن یاہو، محمد بن سلمان اور ٹرمپ کے داماد جیرڈ کشنر کے درمیان ایک اہم رابطے کا ذریعہ قائم ہے جس کے نتیجے میں سعودی عرب اور صہیونیوں کے درمیان تعلقات میں اضافہ ہورہا ہے.
امریکہ میں ایرانیوں کی قومی کونسل کے سربراہ نے کہا کہ اگر مستقبل میں نیتن یاہو کی پالیسیوں کو شکست ہوئی تو اسرائیل میں فوری انتخابات کا انعقاد کیا جائے گا جس سے ایران مخالف سعودی عرب، امریکہ اور اسرائیل کے درمیان گٹھ جوڑ کے لئے نقصان دہ ہوگا.
انہوں نے مزید کہا کہ امریکی کانگریس کے انتخابات کے نتائج کے بعد ٹرمپ کی پالیسیوں کو متعدد سیاسی رکاوٹوں کا سامنا ہوں گی کیونکہ کانگریس ٹرمپ اور سعودی عرب کے درمیان تعلقات، ٹیکس اور ایران مخالف پالیسی کا از سرنو جائزہ لے سکتی ہے.
تریتا پارسی نے کہا کہ ٹرمپ نے دعویٰ کیا تھا کہ وہ ایرانی قومی کرنسی کو گرانے کے ساتھ ایرانی تیل کی برآمدات کی سطح کو بھی صفر تک لائیں گے مگر نہ صرف ایرانی ریال کی قیمت میں استحکام آیا بلکہ ایران پر تیل پابندیوں کی تجدید کے باوجود امریکہ نے عارضی طور پر 8 یورپی اور ایشیائی ملکوں کو ایران سے تیل خریدنے کی اجازت دے دی.
تریتا پارسی نے کہا کہ یورپ کی جانب سے ایران جوہری معاہدے کے تحفظ اور ایرانی مفادات کے پیش نظر یورپ کے مخصوصی مالیاتی میکنزم سے ٹرمپ کی ایران مخالف پالیسیوں کے لئے بڑا خطرہ لاحق ہے.
9393*274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@