امریکہ نے خطے کو بندوقوں کا ڈپو بنادیا ہے: ظریف

تہران، 8 دسمبر، ارنا - ایرانی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ امریکہ نے خطے کو ہتھیاروں کا ڈپو بنادیا ہے جس سے علاقے میں امریکہ کی خطرناک پالیسی ظاہر ہوتی ہے.

''محمد جواد ظریف'' نے آج تہران میں چھ ملکی اسپیکرز کانفرنس کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مزید کہا کہ امریکہ خطے میں خطرناک پالیسی پر گامزن ہے.
انہوں نے ایران کے میزائل پروگرام کے خلاف حالیہ امریکی الزامات پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ ایران اور یورپ کے درمیان تعلقات کو متاثر کرنے کے لئے سرتوڑ کوشش کررہا ہے بلکہ وہ ہمارے اور یورپ کے درمیان تعلقات سے زیادہ خطے کے مسائل کو غلط پیش کررہا ہے.
ظریف نے کہا کہ خطے میں امریکی ہتھیاروں کی فراہمی کی سطح سمجھ سے بالاتر ہے یہاں تک کہ امریکہ علاقائی ضروریات سے بڑھ کر اپنی ہتھیاروں کی منتقلی میں مصروف ہے اور اس پالیسی کی وجہ سے ہمارا خطہ بندوقوں کے ڈپو میں بدل گیا ہے اور بدقسمتی سے اس سے علاقائی امن و سلامتی کو ہرگز فائدہ نہیں ملے گا.
ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ ایسے خطرناک اقدامات کے ردعمل میں امریکہ بے بنیاد الزامات لگانے کا سہارا لیتا ہے جبکہ ہم نے امریکی اخباروں میں پڑھا ہے کہ یمن میں القاعدہ اور شام میں داعش کے دہشتگرد امریکی ہتھیاروں کا استعمال کررہے ہیں جس سے خطے کو شدید خطرات لاحق ہیں.
انہوں نے مزید کہا کہ امریکہ دنیا میں مزید تنہائی کا شکار ہورہا ہے حتی کہ وہ اپنی پالیسی کی خاطر چین کی بڑی کمپنی کی فنانس ڈائریکٹر کو بھی گرفتار کرلیتا ہے.
ظریف کا کہنا تھا کہ ایسے اقدامات سے نہ صرف امریکی طاقت ظاہر نہیں ہوتی بلکہ یہ ان کی مایوسی کی علامت ہے.
274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@