ایرانی تیل کیلئے نئے خریدار مل گئے ہیں: نائب ایرانی صدر

بیجنگ، 5 دسمبر، ارنا- اسلامی جمہوریہ ایران کے نائب صدر نے ایرانی تیل کی برآمدات کے خلاف امریکی پابندیوں پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ تیل کی فروخت کے لئے نئے خریدار مل کر انھیں اپنی تیل فروخت کیا ہے۔

یہ بات سنیئر "اسحاق جانگیری" نے جاپان کی کیوڈو نیوز ایجنسی کے ساتھ انٹرویو دیتے ہوئے کہی۔
انہوں نے ایرانی تیل کے نئے گاہکوں کی شناخت ظاہر نہیں کی، لیکن کہا کہ، مثال کے طور پر ایرانی تیل کی مزید خریداری کے لئے ہم چین، روس اور دیگر ایشیائی ممالک کے ساتھ مذاکرات کر رہے ہیں۔
نائب ایرانی صدر نے مزید کہا کہ ایرانی تیل کی برآمدت کو صفر تک لانے کے لئے امریکہ کیجانب سے دوسرے ممالک کو دھمکیاں دینا، خطرناک ہونے کے باوجود ناممکن ہے۔
انہوں نے کہا کہ اگر ایران اپنی آمدنی کے بنیادی ذریعہ سے محروم ہوجائے تو ہم خاموش نہیں رہیں گے اور وقت پر مناسب اقدامات کریں گے.
سنیئر جہانگیری نے کہا کہ امریکی پابندیوں کے باوجود ہم اپنی تیل کی برآمدات کی سطح کو پابندیوں کے اطلاق سے پہلے کی سطح تک پہنچیں گے۔
نائب ایرانی صدر نے کہا کہ ایرانی تیل کی خریداری کو روکنے کے لئے امریکہ کی جانب سے اپنے اتحادیوں پر دباؤ ڈالنے کے باوجود،ہم، ایران کے ساتھ تعلقات کی دلچسبی رکھنے والی جاپانی کمپینوں کے خدشات کو کم کرنے کیلئے تیار ہیں۔
انہوں نے کہا کہ جاپانی کمپنیوں کے خدشات کو کم کرنے کے سلسلے میں نئے راستے نکالنے کیلئے ان کے ساتھ مذاکرات پر تیار ہیں۔
نائب ایرانی صدر نے اس امید کا اظہار کیا کہ جاپانی کمپنیاں نئی تجاویز کے تحت امریکی دباؤ کو کم کرنے سمیت، ایرانی تیل کے بڑے خریدار کے ناطے سے ایران کے ساتھ باہمی تعلقات کا سلسلہ جاری رکھیں ۔
حالیہ امریکی پابندیوں کے بعد جاپان کو بھی ایران سے تیل لینے کے مد میں چھوٹ ملی ہے.
یاد رہے کہ امریکہ نے 2 نومبر کو اعلان کردیا تھا کہ ایران پر تیل پابندیوں کی تجدید کے باوجود عارضی طور پر 8 ملکوں کو ایران سے تیل خریدنے کی اجازت دی جائے گی جس کی مہلت امریکی قوانین کے تحت 180 دن ہوگی.
9467*274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@