امریکہ نے جوہری معاہدے سے نکل کر قرارداد 2231 کی خلاف ورزی کی ہے: ایران

تہران، 3 دسمبر، ارنا - ایرانی دفترخارجہ کے ترجمان نے کہا ہے کہ امریکہ نے ایران جوہری معاہدے سے نکل کر سلامتی کونسل کی قرارداد 2231 کی خلاف ورزی کی ہے اور اب حیرانگی کی بات ہے کہ امریکہ، ایران پر اس کی خلاف ورزی کا الزام لگارہا ہے.

''بہرام قاسمی'' نے اپنے ایک بیان میں مزید کہا کہ امریکہ نے ایران پر قرارداد 2231 کی خلاف ورزی کا الزام لگایا ہے جبکہ اس نے خود جوہری معاہدے سے غیرقانونی علیحدگی کے بعد اس کی پامالی کی ہے.
انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے مائیک پمپئو کو امریکی وزیر خارجہ کا عہدہ سنبھالنے کے بعد بھی ایرانی پالیسی سے کوئی آگاہی نہیں جبکہ انھیں اپنے ریکارڈ درست کرنے کی ضرورت ہے.
قاسمی نے اس بات پر زور دیا کہ میزائل سرگرمیوں سے متعلق اسلامی جمہوریہ ایران کی پالیسی واضح ہے اور ہم ایک بار پھر اعلان کرتے ہیں کہ میزائل پروگرام ہمارا اندرونی معاملہ ہے.
انہوں نے مزید کہا کہ ایران اپنے میزائل پروگرام سے متعلق کسی سے تجویز یا رہنمائی حاصل نہیں کرتا کیونکہ ہمارا مقصد جارحیت نہیں بلکہ اپنی سرزمین کے دفاع کو یقینی بنانا ہے.
ترجمان نے کہا کہ خطے کی پیچیدہ صورتحال کے پیش نظر اور ماضی میں ایران پر مسلط کردہ جنگ کو دیکھتے ہوئے اسلامی جمہوریہ ایران اپنے دفاع کو ناقابل تسخیر بنانے پر مجبور ہے لہذا ملکی دفاع کے لئے جو قدم اٹھانا پڑا وہ ہم اٹھائیں گے.
انہوں نے مزید کہا کہ یقینا امریکہ دوبارہ میزائل پروگرام کا مسئلہ اٹھا کر عالمی سطح پر ایران فوبیا کو ہوا دینا چاہتا ہے اور اس کے علاوہ ایران اور یورپ کے درمیان مذاکرات کو سبوتاژ کرنے کا سوچتا ہے.
بہرام قاسمی نے کہا کہ یورپی ممالک ایران کی پالیسی سے اچھی طرح واقف ہے لہذا انھیں مائیک پمپئو کے اشتعال انگیز مقاصد کو سنجیدگی سے نہیں لینا چاہئے.
274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@