امریکہ ہرگز تیل کی فروخت کو روکنے کے قابل نہیں ہوگا: ایران

تہران، 28 اکتوبر، ارنا – نائب ایرانی صدر نے کہا ہے کہ حکومت کے مناسب اقدامات کی مبنی پر امریکہ ہرگز ایرانی تیل کی فروخت کو روکنے کا قابل نہیں ہوگا.

یہ بات سنئیر "اسحاق جہانگیری" نے اتوار کے روز نیشنل ہیلتھ انشورنس کے قومی دن کی تقریب میں خطاب کرتے ہوئے کہی.
اس موقع پر انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران نے گزشتہ مہینوں کے دوران 25 لاکھ بیرل تیل برآمد کی ہے ابھی صورتحال میں کئی ہزار بیرل کی کمی ممکن ہے مگر اس کا حجم دس لاکھ بیرل سے کم نہیں پہنچے گا.
جہانگیری نے کہا کہ آج امریکی حکام جھوٹ کہتے ہیں کہ تیل کی قیمتوں میں استحکام لانے کے لئے ایرانی تیل کے بجائے سعودی عرب اور دوسرے ممالک کی تیل متبادل ہونا چاہیئے.
انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ایرانی تیل کی قیمت 30 سے 80 ڈالر تک پہنچ گئی ہے لہذا اگر امریکیوں ہماری تیل کی فروخت کو روک کرسکتے ہیں تو اس کی قیمت 100 ڈالر سے زیادہ پہنچ جائے گی.
انہوں ںے چار نومبر کو ایران مخالف امریکی دوسری پابندیوں کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ امریکہ نے سات ممالک کی جانب سے دستخط ہونے عالمی معاہدہ اور انسانی حقوق کی خلاف ورزی کی ہے.
انہوں نے مزید کہا کہ امریکی حکام جھوٹ دعوی کر رہے ہیں کہ پابندیوں کی بحالی سے ان کا مقصد ایرانی حکومت ہے مگر حقیقت یہ ہے کہ وہ ایران قوم پر دباو دالنا چاہتے ہیں.
نائب ایرانی صدر نے کہا کہ امریکہ ہمارے ملک میں ادویات اور کھانے کی مصنوعات کی درآمدات کی روک تھام کے لئے کوشش کر رہا ہے اور ان کا مقصد ایرانی کرنسی کی منتقلی کو روکنا ہے.
انہوں نے کہا خوش قسمتی سے یورپی یونین، چین، روس اور بھارت ایران جوہری معاہدے کی حمایت کر رہے ہیں لہذا امریکہ ہمارے ملک کے ساتھ باہمی تعاون کرنے والی کمپنیوں پر پابندیاں عائد کرتا ہے.
9393**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@