ایران جوہری معاہدے کے حق میں یورپ کا ڈٹ جانا قابل ستائش ہے: ظریف

تہران، 23 اکتوبر، ارنا - ایرانی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ جوہری معاہدے کو بچانے کے لئے یورپی ممالک نے موثر مؤقف اپنایا ہے جو قابل قدر ہے.

یہ بات ''محمد جواد ظریف'' نے منگل کے روز ایرانی پارلیمنٹ کے اراکین کے ان کیمرہ اجلاس میں خطاب کرتے ہوئے کہی.
پارلیمانی بورڈ آف اسپیکر کے ترجمان 'بہروز نعمتی' نے ان کیمرہ سیشن کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ظریف کا حوالہ دیا اور کہا کہ ایران جوہری معاہدے کے حق میں یورپی ممالک نے اب تک اچھا مؤقف اختیار کیا ہے.
ترجمان نے مزید کہا کہ ایرانی وزیر خارجہ نے اس موقع پر جوہری معاہدہ اور دہشت گردی کی فنانسنگ کی روک تھام (CFT) سے متعلق بات کی.
ان کے مطابق، ظریف اور ان کے معاون عراقچی نے اراکین مجلس کو بتایا کہ امریکہ مختلف طریقوں سے ایران پر معاشی دباؤ ڈالر ملک کو تباہی کی طرف لے جانا چاہتا ہے مگر یہ امریکہ کی خام خیالی ہے.
ایرانی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ امریکہ میڈیا کے ذریعے چھوٹے چھوٹے مسائل کو ایشو بنانا چاہتا ہے جس کی مدد سے وہ ایران کے خلاف نفسیاتی دباؤ میں اضافہ کرے.
پارلیمانی ترجمان نے یورپ کے ساتھ مذاکرات اور مالیاتی شعبے میں موثر نظام کے تعارف سے متعلق بتایا کہ یورپی فریق نے اس بات کی یقین دہانی کرائی ہے کہ یورپی ممالک ایران کے ساتھ مالیاتی لین دین کو منظوم کرنے کے لئے 4 نومبر سے ایک نیا موثر نظام سامنے لائیں گے.
ان کے مطابق، یورپی ممالک کے علاوہ روس، بھارت اور چین نے بھی اس حوالے سے یقین دلایا ہے.
ظریف نے اراکین کو مطلع کردیا کہ ایف اے ٹی ایف کے حالیہ اجلاس میں امریکہ اور ناجائز صہیونی ریاست کے شدید دباؤ کے باوجود یورپی ممالک نے ایرانی مؤقف کی حمایت کی تھی جس کے نتیجے میں ایف اے ٹی ایف نے مزید ایران کے لئے چار مہینوں کی مہلت دے دی.
274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@