ایران اور روس کا اہم امور پر مشترکہ مؤقف ہے: ایرانی سفیر

ماسکو، 23 اکتوبر، ارنا - روس میں تعینات اسلامی جمہوریہ ایران کے سفیر نے کہا ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان مختلف اہم امور اور کلیدی مسائل پر مشترکہ مؤقف پایا جاتا ہے.

'مہدی سنائی' نے روسی اخبار 'ازویستا' کو انٹریو دیتے ہوئے مزید کہا کہ ایران کو یہ حق حاصل ہے کہ اگر جوہری معاہدہ ملکی مفاد کے مطابق نہ ہو تو وہ اس سے نکل جائے.
ان کے مطابق، ایران جوہری معاہدہ دو پہلووں سے اہم ہے، پہلا یہ کہ جوہری معاہدہ چندفریقی عالمی سفارتی کوششوں کا نتیجہ ہے اور دوسرا یہ کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے مخصوص قراردادوں کے ذریعے اس کی تصدیق کی ہے.
ایرانی سفیر نے مزید کہا کہ جوہری معاہدے میں شامل ایران سمیت تمام فریقین نے اس بات پر پابند ہیں کہ اس معاہدے کے من و عن پر عمل کریں، تاہم ایک رکن نے غیرقانونی طور پر اور عالمی قوانین کی پامالی کرتے ہوئے اس معاہدے سے نکل گیا اس کے باوجود ایران نے صبر اور تحمل سے کام لیا اور اب بھی اس معاہدے پر قائم ہے.
انہوں نے کہا کہ ایران کی یہ خواہش ہے کہ اسے جوہری معاہدے کے تحت معاشی مفادات مل جائیں تاہم اگر یہ مفادات کسی ایک رکن کی غیرقانونی علیحدگی سے ایران کو نہ ملے تو یہ ہمارا جائز حق ہے کہ اس معاہدے سے نکل جائیں.
مہدی سنائی نے مزید کہا کہ عالمی عدالت انصاف نے امریکہ کے خلاف ایرانی درخواست کے حق میں فیصلہ سنایا اور اس کے تحت عالمی عدالت نے ایران مخالف امریکی اقدامات پر اس کی سرزنش کی.
انہوں نے کہا کہ یورپی یونین کے ممالک بھی کوشش کررہے ہیں کہ ایران کے ساتھ رقوم کے لین دین کے لئے موثر مالیاتی نظام سامنے لائیں اس حوالے سے روس اور چین کا بھی کردار نہایت اہمیت کا حامل ہے.
ایرانی سفیر نے روسی کردار کو سراہتے ہوئے مزید کہا کہ روس نے ہمیشہ کی طرح ایران جوہری معاہدے کی حمایت کی اور اس کا من و عن نفاذ کا مطالبہ کیا ہے.
274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@