عالمی مسائل امریکی یکطرفہ پالیسیوں کا نتیجہ ہیں: ایرانی اسپیکر

انطالیہ، 9 اکتوبر، ارنا – ایرانی پارلیمنٹ کے اسپیکر نے عالمی مسائل کو امریکہ کی ایک طرفہ پالیسیوں کا نتیجہ قرار دیتے ہوئے دنیا کے ممالک سے مطالبہ کیا کہ امریکی ایک طرفہ پالیسیوں سے نمٹنے کے لیے باہمی تعاون کریں.

یہ بات 'علی لاریجانی" نے منگل کے روز ترکی کے شہر انطالیہ میں عالمی یورشیائی بین الپارلیمانی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کرتے ہوئے کہی.

لاریجانی نے کہا کہ امریکہ اور اسرائیل بین الاقوامی سلامتی کو درہم برہم کرنے کا اہم عنصر ہیں اور امریکہ جیسے بڑی طاقتوں کی جانب سے بین الاقوامی مسائل پر ایک طرفہ پالیسیوں نے عالمی برادری کو بڑے چیلنجوں کا سامنا کیا ہے.

انہوں نے امریکہ کی جانب سے عالمی ایٹمی اور پریس کے معاہدے سے غیرقانونی علیحدگی اور بیت المقدس کو اسرائیل کا دارلحکومت تسلیم کرنے کے اعلان کو امریکہ کے ایک طرفہ اقدامات میں سے ایک ہے.

انہوں نے کہا کہ امریکہ ایسے ایک طرفہ اقدامات کے ساتھ دوسرے ممالک کے حقوق کو پامال کر رہا ہے.

تفصیلات کے مطابق، ایرانی مجلس کے اسپیکر پیر کے روز یوروشیا کی اقتصادی تنظیم کے رکن ممالک کے اسپیکروں کے تیسرے اجلاس کی شرکت کے لیے ترکی کے شہر انطالیہ روانہ ہوگئے.

ترکی کے دورے میں نائب ایرانی اسپیکر 'علی مطہری'، نائب ایرانی صدر برائے پارلیمانی امور 'حسینعلی امیری' اور ایرانی پارلیمنٹ کے ایگزیکیٹیو نائب اسپیکر اور کچھ اراکین مجلس بھی ایرانی اسپیکر کے ہمراہ ہیں.

یہ بات قابل ذکر ہے کہ اس یورشیائی اجلاس میں 20 ممالک سمیت اسلامی جمہوریہ ایران، روس، قطر، فلپائن، پاکستان، منگولیا، لیتھوانیا، لاوس، کویت، کرغزستان، جنوبی کوریا، قازقستان، اردن، جاپان، عراق، ویتنام، ازبکستان، ترکمانستان، ترکی، تھائی لینڈ، تاجکستان، سری لنکا، سلوواکیا، سربیا، سعودی عرب، انڈونیشیا، ہنگری، چین، کمبوڈیا، بلغاریہ، برونائی، بوسنیا اور ہرزیگوینا، بیلاروس، بحرین، آذربایجان، ارمنیا، افغانستان کے اسپیکرز اور 17 یورپی اور ایشیائی ممالک کے پارلیمانی وفود شریک ہیں.

**9410

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے.IrnaUrdu@