ایف اے ٹی ایف کا ایران کو اکتوبر تک بلیک لسٹ نہ کرنے کا فیصلہ

تہران، 30 جون، ارنا - اقوام متحدہ کے بین الحکومتی ادارے فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (FATF) نے منی لانڈرنگ کے حوالے سے اسلامی جمہوریہ ایران کو بلیک لسٹ نہ کرنے میں 4 مہینوں کی توثیق کردی.

تفصیلات کے مطابق، فرانس کے دارالحکومت پیرس میں ایف اے ٹی ایف کے اجلاس کے موقع پر اس عالمی ادارے کی جانب سے ایران کو بلیک لسٹ کرنے معطلی کی توثیق کردی گئی.

ایف اے ٹی ایف نے ایران کی جانب سے اپنے ایکشن پلان نافذ نہ ہونے پر مایوسی کا اظہار کیا تاہم اس کے باوجود ایران کو اکتوبر تک بلیک لسٹ نہ کرنے کا بھی فیصلہ کیا گیا.

یہ بات قابل ذکر ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران نے 2017 کے دوران دہشتگردی کے حوالے مالی معاونت کی روک تھام اور انسداد منی لانڈرنگ کے حوالے سے نئی قانون سازی کے لئے تجاویز پیش کیں.

ایران کی تجاویز کو مد نظر رکھتے ہیں جنھیں ایرانی پارلیمنٹ نے منظور کرنا ہے اور حکومتی موثر اقدامات کے پیش نظر ایف اے ٹے ایف نے ایران مخالف ایکشن کی معطلی کو آئندہ چار مہیوں تک بڑھایا.

عالمی انسداد منی لانڈرنگ گروپ (FATF) ایک بین الحکومتی ادارہ ہے جس کا قیام 1989 میں عمل میں آیا تھا. اس ادارے کا بنیادی مقصد یہ ہے کہ بین الاقوامی مالیاتی نظام کو دہشت گردی، کالے دھن کو سفید کرنے اور اس قسم کے دوسرے خطرات سے محفوظ رکھا جائے اور اس مقصد کے لیے قانونی، انضباطی اور عملی اقدامات کیے جائیں.

واضح رہے کہ امریکہ سمیت بعض ممالک یہ کوشش کررہے تھے کہ ایف اے ٹی ایف ایران کے خلاف سخت حفاظتی اقدامات کرے تاہم ایف اے ٹی ایف نے ایران کے خلاف حفاظتی اقدامات کی معطلی میں چار مہینوں کی توثیق کردی.

274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@