اراکین سلامتی کونسل ایران جوہری معاہدے کے نفاذ کے خواہاں

نیو یارک، 28 جون، ارنا - اقوام متحدہ میں تعینات اسلامی جمہوریہ ایران کے مستقل مندوب نے کہا ہے کہ تقریبا تمام اراکین سلامتی کونسل نے جوہری معاہدے کے خلاف امریکی اقدامات کی مخالفت کرتے ہوئے اس معاہدے کے مکمل نفاذ پر زور دیا ہے.

'غلام علی خوشرو' میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مزید کہا کہ جوہری معاہدے سے امریکی علیحدگی اور ماورائے قانون پابندیاں لگانا منشور اقوام متحدہ اور سلامتی کونسل کی قرارداد 2231 کی کھلی خلاف ورزی ہے.

انہوں نے کہا کہ سلامتی کونسل کے اکثریت اراکین نے وائٹ ہاؤس کے اقدامات پر کڑی تنقید کرتے ہوئے ایران جوہری معاہدے کے مکمل نفاذ کی حمایت کا اعلان کیا ہے.

ایرانی مندوب نے مزید کہا کہ جوہری معاہدے سے امریکہ کی علیحدگی کے بعد پہلی بار سلامتی کونسل کے اجلاس کا انعقاد کیا گیا جس سے امریکہ کی تنہائی نظر آتی ہے.

انہوں نے کہا کہ عالمی معاہدوں سے نکلنا امریکہ کا وطیرہ بن چکا ہے جیسا کہ یہ پہلے بھی پیرس معاہدے سے نکل گیا اور اپنے سفارتخانے کو بیت المقدس منتقل کرنے کے غیرقانونی معاہدے کی توثیق بھی کی.

غلام علی خوشرو نے کہا کہ سلامتی کونسل کی نشست میں امریکہ کے سوا تمام اراکین نے ایران کی دیانت داری کی تصدیق کی اور کہا کہ عالمی جوہری توانائی ادارے نے اب تک 11 مرتبہ جوہری معاہدے سے متعلق ایران کی شفاف کارکردگی کی تصدیق کرچکا ہے.

اس نشست میں سربراہ اقوام متحدہ نے اپنی رپورٹ میں جوہری معاہدے سے امریکی علیحدگی پر صرف افسوس کا اظہار کیا تھا جس کے ردعمل میں ایرانی مندوب نے کہا کہ سیکریٹری جنرل نے امریکی علیحدگی پر تو افسوس کیا مگر انھیں چاہئے تھا کہ تیسرے فریق کے بے بنیاد الزامات پر توجہ نہ دیں جبکہ ایران اپنے تمام وعدوں پر من و عن عمل کیا ہے اور کرتا رہے گا.

274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@