ایران اوپیک تنظیم میں سعودی اور روسی تجویز کو ویٹو کرے گا

تہران، 19 جون، ارنا – تیل برآمد کرنے والے ممالک کی تنظیم (OPEC) میں تعینات اسلامی جمہوریہ ایران کے مندوب نے کہا ہے کہ تیل کی پیداوار کو کم کرنے سے متعلق روسی اور سعودی تجویز کو ویٹو کردیا جائے گا.

یہ بات 'حسین کاظم پور اردبیلی' نے امریکی میڈیا بلومبرگ کے ساتھ انٹرویو دیتے ہوئے کہی.
انہوں نے مزید کہا کہ ہم عراق اور وینزویلا کے تعاون سے روس اور سعودی عرب کی تجویز کو ویٹو کریں گے.
کاظم پور نے کہا کہ اوپیک کے تین رکن ممالک اس تجویز کی منظوری کو روکنے کا ارادہ کرتے ہیں.
انہوں نے مزید کہا کہ اس تجویز کی منظوری کے لئے اوپیک تنظیم میں اتفاق رائے کی ضرورت ہے اور اگر سعودی عرب اور روس اکیلے طور پر بڑھتی ہوئی پیداواری پر فیصلہ کریں تو اوپیک کے رکن ممالک کے درمیان باہمی تعاون کا معاہدہ ختم ہوجائے گا.
تفصیلات کے مطابق، روسی وزیر توانائی 'الکسانڈر نواک' نے کہا کہ روس اور سعودی عرب نے تیل منڈیوں میں پیداواری کو بڑھانے پر اتفاق کئے ہیں.
یہ بات قابل ذکر ہے کہ روس اور سعودی عرب آئندہ جمعہ ویانا میں اوپیک کے رکن ممالک کے اجلاس میں تیل کی بڑھتی ہوئی پیداواری، ایران اور وینزویلا کے خلاف عائد ہونے والی پابندیوں کی وجہ سے ان ممالک کی تیل کی برآمدات کی کمی کو بہتر بنانے کے لئے تیل کی پیداواری بڑھانے کی تجویز پر تبادلہ خیال کریں گے.
سعودی عرب اور روس کا مقصد اوپیک اور اس کے اتحادی کے درمیان تیل کی پیداواری کو روزانہ 5 سے 15 لاکھ بیرل تک پہنچنا ہے.
9393٭274٭٭
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@