دہشتگردوں کو ایران کیخلاف کاروائی کرنے کی اجازت نہیں دیں گے: عراقی کردستان

اربیل، 18 جون، ارنا - عراقی کردستان کے حکومتی ترجمان نے کہا ہے کہ ہم دہشتگردوں کو ہماری سرزمین ایران کے خلاف استعمال کرنے کی ہرگز اجازت نہیں دیں گے.

عراقی کردستان کی حکومت کا بیان ایسے وقت میں آیا ہے جبکہ اسلامی جمہوریہ ایران نے گزشتہ دنوں مشترکہ سرحد سے دہشتگردوں کے ملک میں داخلے کی کوشش اور پھر جھڑپ کے واقعے پر کُرد حکام سے احتجاج کیا تھا.

حکومتی ترجمان 'صفین دیزایی' نے ایران عراق مشترکہ سرحد پر دہشتگردی کے واقعے اور اس پر ایرانی ردعمل سے متعلق کہا کہ ہم ایران اور عراقی کردستان کے درمیان تعلقات کو بڑی اہمیت دیتے ہیں.

انہوں نے مزید کہا کہ مشترکہ سرحد پر حالیہ واقعے سے متعلق تحقیقات ہوں گی جس کے لئے ایران کے ساتھ مل کر مشترکہ کمیٹی کا قیام عمل میں لایا جائے گا.

عراقی کردستان کے ترجمان نے کہا کہ دہشتگرد عناصر سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ وہ کرد سرزمین کو ایران اور ترکی کے خلاف استعمال نہ کریں کیونکہ عراقی کردستان کی حکومت کسی بھی گروپ کو ایسی کاروائی کی ہرگز اجازت نہیں دے گی.

یاد رہے کہ ایران کی عراقی کردستان کے ساتھ ملحقہ مشترکہ سرحد پر دہشتگردوں کی نقل و حرکت کے بعد اربیل میں تعینات ایرانی قونصلٹ کے اعلی نمائندے نے گزشتہ دنوں کرد حکام کے ساتھ احتجاج کیا اور اس حوالے سے احتجاجی مراسلہ بھی حوالہ کیا گیا.

اس سے پہلے ترک وزیراعظم بنالی یلدرم نے اعلان کیا تھا کہ سرحدی علاقے میں واقع اینجرلک ایئربیس کا مقصد دہشتگرد عناصر کا مقابلہ کرنا ہے تاہم کسی کو یہاں سے ایران یا دوسرے ملک پر حملے کی اجازت نہیں دی جائے گی.

274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@