ایران کی افغان علماء کے اجلاس میں دھماکے کی مذمت

تہران، 4 جون، ارنا - اسلامی جمہوریہ ایران نے افغان دارالحکومت کابل میں علمائے کرام کے اجلاس میں خودکش حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے.

ترجمان دفترخارجہ 'بہرام قاسمی' نے پیر کے روز اپنے بیان میں کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران ماضی کی طرح افغان قوم اور حکومت کے شانہ بشانہ کھڑا ہے.

انہوں نے مزید کہا کہ ایران، برادر اور دوست ملک افغانستان میں قیام امن و سلامتی کے لئے کسی بھی تعاون سے دریغ نہیں کرے گا کیونکہ ہمسایہ ملک میں امن و آشتی ہماری خواہش ہے.

قاسمی نے کہا کہ جب افغانستان کے تمام علما ملک میں جنگ کے خاتمے اور امن کی بقا کےلئے ایک ہی پلیٹ فورم پر اکھٹے ہوئے تو سفاک دہشتگردوں نے امن کے حامی نہتے افراد کو نشانہ بنایا.

انہوں ںے مزید کہا کہ ایسی سفاک کاروائیوں کا مقصد دہشتگردی اور تشدد کے خلاف افغان عوام کی آواز اور ان کی امن خواہش کو دنیا کے سامنے چھپانا ہے.

ترجمان دفترخارجہ نے خودکش حملے میں جاں بحق ہونے والوں کے لواحقین کے ساتھ تعزیت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ہم افغانستان میں دہشتگردوں کے خلاف افغان قوم کے ساتھ کھڑے ہیں.

انہوں نے کابل حملے میں جاں بحق ہونے والوں پر اسلامی جمہوریہ ایران کی قوم اور حکومت کی طرف سے افغان قوم اور حکومت کے ساتھ تعزیت اور ہمدری کا بھی اظہار کیا.

یاد رہے کہ کابل میں حکومت کیخلاف جنگ کو حرام قرار دینے والے علمائے کرام کے اجلاس میں دھماکے سے 14 افراد جاں بحق ہو گئے ہیں.

خودکش حملہ آور نے خود کو دھماکے سے اس وقت اڑایا جب شرکا اجتماع کے بعد باہر نکل رہے تھے.

274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@