ایران کا اقوام متحدہ سے مشرق وسطی میں بچوں کی صورتحال کا نوٹس لینے کا مطالبہ

تہران، 2 جون، ارنا - اسلامی جمہوریہ ایران نے اقوام متحدہ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ مشرق وسطی میں تشدد، دہشتگردی اور جنگوں کے شکار مظلوم بچوں کی صورتحال کی دیکھ بھال کے لئے فوری اقدامات کرے.

یہ بات نائب ایرانی وزیر انصاف برائے بین الاقوامی اور انسانی حقوق امور 'محمود عباسی' نے یورپی ملک جمہوریہ مالٹا کے دورے کے موقع پر بچوں کے خلاف تشدد کے امور پر اقوام متحدہ کی نمائندہ 'مارتا سونٹا پایس' کے ساتھ ایک ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کہی.
اس موقع پر انہوں نے کہا کہ یمن، فلسطین اور افغانستان میں لاکھوں بچے جنگ، نسل پرستی اور ریاستی دہشتگردی کا شکار ہیں لہذا اقوام متحدہ کو چاہئے کہ ان مشکلات کی روک تھام کے لئے اپنی ذمے داری ادا کرے.
نائب ایرانی وزیر انصاف نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران بچوں کے خلاف تشدد کے خاتمہ اور ان کی ترقی کے لئے کسی بھی اقدام کا خیر مقدم کرتا ہے جبکہ ایران میں بچوں کے حقوق کے حصول کے لئے موثر اقدامات اٹھائے جارہے ہیں.
انہوں نے مزید کہا کہ سعودی عرب کی جانب سے یمن کے نہتے بچوں کے قتل عام خلاف عالمی برادری کی خاموشی ناقابل قبول ہے.
انہوں نے کہا کہ یمن میں شدید موسم گرما کی خاطر لاکھوں بچے قحط اور سنگین مسائل سے دوچار ہیں اور ان مسائل پر قابو پانے کے لئے اقوام متحدہ کے سنجیدہ اقدامات ناگزیر ہیں.
نائب ایرانی وزیر انصاف نے عالمی قوانین کے فریم ورک کے تحت بچوں کے حقوق کی صورتحال پر ایک رپورٹ پیش کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ ایرانی پارلمینٹ بچوں کے روشن مستقبل کے لئے ایک جامع بل منظور کرے گی.
مارتا سونٹا پایس نے ایران میں بچوں کے حقوق کی ترقی کے بڑھتے ہوئے اشارے پر اپنے خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ اس حوالے سے اپنے تجربات کی منتقلی کے لئے تیار ہے.
9393*274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@