بھارت، ایران مخالف یکطرفہ پابندیوں کی حمایت نہیں کرے گا: ظریف

نئی دہلی، 29 مئي، ارنا – اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ بھارت نے واضح طور پر اعلان کیاہے کہ وہ ایران مخالف یکطرفہ پابندیوں کی حمایت نہیں کرے گا.

یہ بات 'محمد جواد ظریف' نے گزشتہ روز بھارتی دارالحکومت نئی دہلی میں اپنے بھارتی ہم منصب 'سوشما سوراج' کی ملاقات کے بعد صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی.
اس موقع پر انہوں نے بھارتی حکام کے ساتھ اعلی سطح پر انجام ہونے والے مذاکرات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ بھارتی وزیر خارجہ نے اعلام کردیا کہ ایک فریقی پابندیوں کو منظور نہیں کرتا ہے اور اسلامی جمہوریہ ایران کے ساتھ کثیرالجہتی تعلقات کو فروغ دینے کا خواہاں ہے.
ظریف نے کہا کہ ہم نے اس مذاکرات میں تیل کی تلاش اور تیل کے مشترکہ منصوبوں پر عملدرآمد کرنا، براہ راست کاروباری تعلقات، کرنسی کے تبادلہ، قومی کرنسیوں سے استعمال، ریلوے لائن کا شعبہ، چابہار بندرگاہ، شمالی جنوبی کوریڈور اور ٹرانزٹ کے شعبوں میں باہمی تعاون پر تبادلہ خیال کیا.
انہوں نے کہا کہ دستخط ہونے والے معاہدوں کے مطابق، دونوں ممالک کے درمیان بینکاری، کاروباری اور کسٹم ٹیرف پر مشترکہ کمیشن کا انعقاد پر اتفاق کیا گیا.
انہوں نے اس دورے پر اپنے خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ دونوں ممالک اور عالمی برادری جوہری معاہدے کے تحفظ کے لئے پر عزم ہیں اور ایران کے تجارتی شراکت دار ممالک کو اس حوالے سے اپنے مناسب موقف کو اختیار کرنا چاہیئے.
تفصیلات کے مطابق، اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ 'محمد جواد ظریف' پیر کی علی الصبح کے روز بھارت کے ایک روزہ دورے پر بھارتی دارالحکومت 'نئی دہلی' پہنچ گئے ہیں.
یہ بات قابل ذکر ہے کہ اعلی سطح سیاسی اور اقتصادی وفد ایرانی وزیر خارجہ کے ہمراہ تھے. ترجمان دفترخارجہ کے مطابق اس دورے کے موقع دونوں ممالک نے خطے کی تازہ ترین صورتحال اور عالمی تبدیلیوں پر بات چیت کی.
9393*274**
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@