وائٹ ہاؤس کے مکین الزامات کے بجائے دنیا کو جواب دیں: ایران

تہران، 22 مئی، ارنا - ایران کے حکومتی ترجمان نے امریکی وزیر خارجہ کے دعووں پر اپنے ردعمل میں کہا ہے کہ وائٹ ہاؤس کے مکین من گھڑت الزامات کے بجائے عالمی رائے عامہ کو جواب دیں.

'محمد باقر نوبخت' نے منگل کے روز تہران میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ امریکی وزیرخارجہ کے الزامات کے بعد ایرانی صدر نے فوری طور پر اسلامی جمہوریہ ایران کے رسمی مؤقف کا اعلان کیا.

انہوں نے مزید کہا کہ دفترخارجہ کے حکام بھی جلد اس حوالے سے تفصیلی بیان جاری کریں گے.

ترجمان نے کہا کہ ایرانی عوام نے 40 سال پہلے اسلامی انقلاب کو کامیاب بنایا مگر کیا امریکہ اس کے حق میں تھا. اگر امریکہ کو کچھ یاد نہیں تو اسے چاہئے کہ اپنے سابق جنرلوں اور حکام سے پوچھے.

انہوں نے امریکی حکام سے استفسار کیا کہ جب امریکہ فوجی طیارے اور ہیلی کاپٹر مخصوص عزائم کے لئے ایرانی صحرائے طبس میں داخل ہوئے تھے مگر یہ سارے طیارے اور ہیلی کاپٹر آپس میں ٹکرا کر تباہ ہوگئے اور امریکی کچھ نہ کرسکے.

حکومتی ترجمان نے مزید کہا کہ انقلاب کے کچھ ہی سال بعد اس وقت کے ایرانی صدر، وزیر اعظم، چیف جسٹس، اراکین پارلیمنٹ بالخصوص نہتے شہریوں کو متعدد دہشتگردی کے حملوں میں شہید کردیا، منافقین گروپ کے عناصر نے کاروائیاں کیں. کیا اس ساری صورتحال کا مقصد ایران کو مضبوط اور طاقتور بنانا تھا؟

انہوں نے کہا کہ جب صدام کی فوج نے امریکی حمایت اور خطے کے بعض جابر ممالک کی مدد سے ایران پر حملہ کیا اور امریکی ساختہ طیاروں کے ذریعے ایران کو تباہ کیا تو کیا اس کا مقصد ایرانی مسلح افواج کو طاقتور بنانا تھا؟

محمد باقر نوبخت نے مزید کہا کہ امریکہ گزشتہ 40 سال سے ایران کو کمزور کرنے پر اترا ہوا ہے لیکن کیا ہماری مسلح افواج کمزور ہوئیں. ہاری معیشت کو کمزور کرنے کی کوششیں کی گئیں لیکن کیا 40 سال پہلے کے مقابلے میں آج ایران کی معیشت مزید مضبوط نہیں ہوا؟

انہوں نے مزید کہا کہ آئی ایم ایف کی تازہ ترین رپورٹ کے مطابق اسلامی جمہوریہ ایران دنیا کا 18ویں بڑا معاشی ملک ہے اور پابندیوں کے باوجود بھی ایران معاشی لحاظ سے اچھی پوزیشن کا مالک ہے.

274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@