ایران کیخلاف اتحاد کا قیام ٹرمپ کی خام خیالی ہے: سابق امریکی مذاکرات کار

نیو یارک، 19 مئی، ارنا - امریکہ کی جوہری مذاکراتی ٹیم کے سابق رکن نے کہا ہے کہ اگر ڈونلڈ ٹرمپ سمجھتا ہے کہ وہ جوہری معاہدے سے پہلے کی طرح ایران کے خلاف اتحاد قائم کیا جاسکتا ہے تو وہ اور اس کے اتحادی خام خیالی کا شکار ہیں.

یہ بات 'رچرڈ نیپیو' نے ہفتہ کے روز ارنا نیوز ایجنسی کے ساتھ خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہی.

انہوں نے مزید کہا کہ جوہری معاہدے سے پہلے ایران کے خلاف اتحاد بنا ہوا تھا تاہم ڈونلڈ ٹرمپ اس معاہدے نکل کر اب ایک بار پھر ایران کے خلاف اتحاد تشکیل دینے کے خواہاں ہیں لیکن اس سے تہران نہیں بلکہ واشنگٹن کو دنیا میں تنہائی ملے گی.

انہوں نے کہا کہ ڈونلڈ ٹرمپ ایران سے جوہری سرگرمیوں سے دستبردار ہونے کا مطالبہ کررہے ہیں جو بلاجواز ہے کیونکہ ہمیں ایسا نہیں لگتا کہ ایران پُرامن جوہری سرگرمیوں سے دستبردار ہو.

کولمبیا یونیورسٹی کے عالمی توانائی پالیسی مرکز کے سنیئر ریسرچ فلو نے کہا کہ ایسے وقت میں جب ایران اور یورپ جوہری معاہدے کو بچانے کے لئے مذاکرات کررہے ہیں ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران کے مرکزی بینک کے سربراہ پر پابندی لگادی جس یہ بات ظاہر ہوتی ہے کہ امریکہ ہرگز نہیں چاہتا ہے کہ جوہری معاہدہ بچ جائے.

ان کے مطابق، ٹرمپ کی جوہری معاہدے سے علیحدگی کا اصل مقصد ایران کے خلاف اتحاد تشکیل دینا ہے. حتی کہ ٹرمپ انتظامیہ یہ بات واضح کرنے میں ناکام رہی ہے کہ امریکہ کس بنیاد پر ایران معاہدے سے الگ ہوگیا.

انہوں نے دنیا میں امریکی تنہائی پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہم مذاکراتی عمل اور ایران کے ساتھ سفارتی طریقہ اپنانے کی حمایت کرتے ہیں.

274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@