ایران ترکی تعلقات کے فروغ سے علاقائی سلامتی مضبوط ہوگی: روحانی

استنبول، 19 مئی، ارنا - ایران کے صدر نے کہا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران اور ترکی کے باہمی تعلقات کو فروغ دینے سے علاقائی امن و سلامتی کو مضبوط بنانے میں مدد ملے گی.

یہ بات صدر مملکت ڈاکٹر 'حسن روحانی' نے گزشتہ روز اسلامی تعاون تنظیم (OIC) کے ہنگامی اجلاس کے موقع پر اپنے ترک ہم منصب 'رجب طیب اردوان' کے ساتھ ایک ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کہی.

اس موقع پر ڈاکٹر روحانی نے کہا کہ علاقائی مسائل کے حل بالخصوص مظلوم فلسطینی قوم کے دفاع کے لئے ایران اور ترکی کے درمیان باہمی تعاون کو بڑھانے کی ضرورت ہے.

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ تہران اور انقرہ کے درمیان باہمی مشاورت کو بڑھانے میں دونوں ممالک کے عوام اور علاقائی امن و استحکام کا فائدہ ہے.

ایرانی صدر نے ترکی کے ساتھ قریبی تعلقات بالخصوص تجارتی، اقتصادی، ثقافتی اور سیاسی شعبوں میں تعاون پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بینکاری شعبے میں مشترکہ سرگرمیوں کی توسیع سے دوطرفہ تجارت کو قابل قدر فروغ ملے گا.

اس موقع پر انہوں نے جوہری معاہدے سے امریکہ کی علیحدگی کا حوالہ دیتے ہوئے اسے عالمی قوانین کی کھلی خلاف ورزی قرار دیا اور کہا کہ آج ہم دیکھ رہےہیں کہ دنیا کے مختلف ممالک نے امریکہ کے اس اقدام کی مخالفت کی ہے.

ترک صدر نے اسلامی تعاون تنظیم کے ہنگامی اجلاس میں اسلامی جمہوریہ ایران کی شرکت کو اہم قرار دیتے ہوئے کہا کہ ایران اور ترکی کے درمیان تعاون کا سلسلہ جاری رہے گا.

صدر اردوان نے کہا کہ ہم امریکی سفارتخانے کی بیت المقدس منتقلی کو تسلیم نہیں کرتے بلکہ اس کے خلاف مزاحمت جاری رکھیں گے.

274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@