ظریف کا برسلز کی نشست کے اہم سیاسی نتائج پر زور

برسلز، 16 مئی، ارنا – ایرانی وزیر خارجہ نے برسلز میں تین یورپی وزرائے خارجہ اور یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کی سربراہ کے ساتھ منعقد ہونے والی نشست کے سیاسی نتائج پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس نشست میں سنجیدہ اقدامات اٹھ گیا ہے.

یہ بات 'محمد جواد ظریف' نے بدھ کے روز برسلز کی واپسی کے موقع پر صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی.

اس موقع پر انہوں نے کہا کہ یورپی ممالک نے ایران کے قومی مفادات کے تحفظ کے متعلق سے ضروری اقدامات کی فہرست کو تیار کی ہیں جو ان کا جائزہ لینا لازمی ہے.

ظریف نے کہا کہ جوہری معاہدہ ایک مستقل موضوع ہے جو دوسرے مسائل سے متعلق نہیں اور آئندہ ہفتے ویانا میں نائب وزرائے خارجہ کے درمیان ایک نشست کا انعقاد کی جائے گی.

انہوں نے مزید کہا کہ امریکہ کے بغیر جوہری معاہدے کے پانج رکن ممالک کے مشترکہ کمیشن کے اجلاس کا آئندہ جمعہ انعقاد کیا جائے گا.

ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ یورپ اور امریکہ کے درمیان کثیر الجہتی تعلقات قائم ہے جو اسلامی جمہوریہ ایران اور امریکہ کے درمیان موجودہ مشکل اس تعلقات سے مختلف ہے.

انہوں نے کہا کہ ایران یورپ کی جانب سے جوہری معاہدے میں اپنے ملکی مفادات کی حمایت چاہتا ہے.

انہوں نے ٹرمپ کی جانب سے چیف ایرانی بینک پر پابندی لگانے پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ان کے ایسے اقدام عالمی قوانین کی کھلی خلاف ورزی اور اس کی کمزوری کی علامت ہے.

یاد رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے گزشتہ ہفتے ایک بار پھر ایران اور جوہری معاہدے کے خلاف پرانے الزامات کو دہرا کر اس معاہدے سے امریکہ کی علیحدگی کا اعلان کردیا تھا.

ٹرمپ نے ایران کے خلاف پرانی ہرزہ سرائیوں کو دہراتے ہوئے کہا کہ وہ ایران پر دوبارہ پابندیاں لگانے کے حکم نامے پر دستخط کریں گے.

ٹرمپ کی علیحدگی کے ردعمل میں یورپی ممالک نے کہا کہ وہ ایران جوہری معاہدے پر قائم رہیں گے.

صدر اسلامی جمہوریہ ایران ڈاکٹر حسن روحانی نے بھی ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے جوہری معاہدے سے علیحدگی کے اعلان کے ردعمل میں کہا کہ آج سے یہ معاہدہ ایران اور اس پر دستخط کرنے والے 5 فریقین کے درمیان رہے گا.

انہوں نے ایرانی قوم کو اس بات کی یقین دہانی کرائی ہے کہ اگر موجودہ صورتحال میں ہمارے قومی مفادات کو تحفظ نہ ملے تو وہ ایک بار پھر قوم سے خطاب کرتے ہوئے ریاست اور حکومت کے تعمیری فیصلوں سے آگاہ کریں گے.

9393*274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@