فلسطینیوں پر مظالم اور عالمی معاہدوں کی امریکی خلاف ورزی کی پالیسی یکساں ہے: امریکی دانشور

نیو یارک، 15 مئی، ارنا - خاتون امریکی دانشور اور اینٹی وار تنظیم کی فعال کارکن کا کہنا ہے کہ غزہ میں نہتے فلسطینیوں کے قتل عام اور القدس میں امریکی سفارتخانے کی منتقلی عالمی معاہدوں کی پاسداری نہ کرنے کی امریکی پالیسی کا تسلسل ہے.

یہ بات 'سارہ فلانڈیرز' جو امن پسند تنظیم انٹرنیشنل ایکشن سینٹر کی سنیئر رکن بھی ہیں، نے ارنا نیوز ایجنسی کے نمائندے کے ساتھ خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہی.

انہوں نے مزید کہا کہ آج ٹرمپ انتظامیہ نے فلسطینیوں کا کھولا قتل عام کرنے کے مقصد سے ناجائز صیونی ریاست کو چھوٹ دے رکھی ہے جبکہ غزہ میں نہتے عوام پر جارحیت کی حمایت کرنے سے یہ بات ظاہر ہوگئی کہ امریکہ سامنے عالمی قوانین اور ضوابط کی کوئی حیثیت نہیں ہے.

انہوں نے کہا کہ صہیونی حکمران مقبوضہ فلسطین میں نسل کشی کی پالیسی پر عمل پیرا ہیں. وہ در حقیقت فلسطینی نسل کو زمین سے مٹانا چاہتے ہیں. آج فلسطینی عوام غزہ میں جو ایک جیل کی طرح ہے وہاں محصور ہیں، ان کی مزحمت دنیا کی دیگر اقوام کے لئے مشعل راہ ہے.

خاتون امریکی دانشور نے کہا کہ امریکی میڈیا اور نیوز چینل فلسطینیوں کی خلاف امریکی پالیسی بالخصوص غزہ میں صہونی جارحیت پر پردہ ڈالتے ہیں او وہ ہرگز فلسطینیوں کو درپیش مصائب اور سختیوں پر بات نہیں کرتے.

274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@