آسٹرین صدر کا ایران جوہری معاہدے کے تحفظ پر زور

تہران، 15 مئی، ارنا - آسٹریا کے صدر 'الیگزینڈر فان ڈیئر بیلن' نے ایران جوہری معاہدے کی اہمیت کا ذکر دیتے ہوئے اس سمجھوتے کے تحفظ پر زور دیا.

صدر الیگزینڈر نے ایک ٹوئٹر پیغام میں مزید کہا کہ ویانا میں طے پانے والا جوہری معاہدہ ایران کے جوہری پروگرام سے متعلق مسائل کے حل کے لئے ایک بنیاد ہے لہذا اس معاہدے کا تسلسل کو جاری رکھنے کی ضروری ہے.

آسٹرین صدر نے اپنے ٹوئٹر پیغام میں مختلف بین الاقوامی مسائل بالخصوص شام، یمن، یوکرائن، کوریائی ریاستوں کے مسائل، ناجائز صہیونی ریاست اور فلسطین کے درمیان تنازع سے بھی بات کی.

یاد رہے کہ 14 جون 2015 کو ویانا میں ایران، یورپی یونین اور گروپ 5+1 (چین، فرانس، روس، برطانیہ، امریکہ اور جرمن) کے درمیان عالمی جوہری معاہدے (JCPOA) پر دستخط کئے گئے.

گزشتہ ہفتے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران اور جوہری معاہدے کے خلاف پرانے الزامات کو دہرا کر اس معاہدے سے امریکہ کی علیحدگی کا اعلان کردیا تھا.

ٹرمپ نے ایران کے خلاف پرانی ہرزہ سرائیوں کو دہراتے ہوئے کہا کہ وہ ایران پر دوبارہ پابندیاں لگانے کے حکم نامے پر دستخط کریں گے.

ٹرمپ کی علیحدگی کے ردعمل میں یورپی ممالک نے کہا کہ وہ ایران جوہری معاہدے پر قائم رہیں گے.

صدر اسلامی جمہوریہ ایران ڈاکٹر حسن روحانی نے بھی ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے جوہری معاہدے سے علیحدگی کے اعلان کے ردعمل میں کہا کہ آج سے یہ معاہدہ ایران اور اس پر دستخط کرنے والے 5 فریقین کے درمیان رہے گا.

انہوں نے ایرانی قوم کو اس بات کی یقین دہانی کرائی ہے کہ اگر موجودہ صورتحال میں ہمارے قومی مفادات کو تحفظ نہ ملے تو وہ ایک بار پھر قوم سے خطاب کرتے ہوئے ریاست اور حکومت کے تعمیری فیصلوں سے آگاہ کریں گے.

9410*274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@