اعلی ایرانی رکن پارلیمنٹ کا ایران اور افغانستان کے درمیان مشترکہ دفاعی تعاون بڑھانے پر زور

تہران، 14 مئی، ارنا - اعلی ایرانی رکن پارلیمنٹ نے دہشتگردی گروپوں کے خلاف جنگ کے لیے ایران اور افغانستان کے درمیان مشترکہ دفاعی تعاون بڑھانے پر زور دیا.

یہ بات ایران کی مجلس (پارلیمنٹ ) کی خارجہ پالیسی اور قومی سلامتی کمیشن کے سربراہ' علاءالدین بروجردی' نے گزشتہ روز ایران کے دورے پر آئے ہوئے افغان وزیر دفاع ' طارق شاه بہرامی' کے ساتھ ملاقات کرتے ہوئے کہی.

انہوں نے دونوں ممالک کے درمیان مذہبی، ثقافتی اور زبانی مشترکات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ یہ مشترکات سیاسی، اقتصادی اور ثقافتی کے شعبوں میں ایران اور افغانستان کے مابین باہمی تعاون کو فروغ دینے کے لیے ایک سنہری موقع ہے.

بروجردی نے کہا کہ دونوں ممالک کی پارلیمانوں کے درمیان خصوصی وفود کا تبادلہ قانون سازی کے میدان میں تجربات کے تبادلے میں مدد کرسکتا ہے.

انہوں نے کہا کہ اجنبیوں کی موجودگی خطے میں خطے کے عدم استحکام کا باعث قرار دیتے ہوئے کہا کہ امریکہ اور صہیونی ریاست خطے میں دہشتگردی گروپوں کی تخلیق کر کے امت مسلمہ کی طاقت کو کمزور کرنا چاہتے ہیں.

بروجردی نے بتایا کہ ایران افغانستان میں امن اور استحکام کے عمل کی حمایت کرتا ہے اور اس حوالے سے کسی بھی کوشش سے دریغ نہیں کرے گا.

اس موقع میں افغان وزیر دفاع نے گزشتہ سالوں میں افغان عوام کی حمایت پر ایرانی قوم اور حکومت کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ افغان کے عوام کبھی ایران کی حمایت اور مہمان نوازی کو بھول نہیں کریں گے.

انہوں نے خطے میں دہشتگردی گروپوں کی حمایت کے لیے بعض خطی ممالک کی پالیسیوں پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ افغانستان طالبان، القاعدہ اور داعش دہشت گرد گروہوں کے خلاف جنگ میں فرنٹ لائن پر کھڑا ہے.

9410٭274٭٭

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@