ایران جوہری معاہدے کے تحفظ کیلئے یورپی یونین کا وقت محدود ہے: صدر روحانی

تہران، 14 مئی، ارنا – صدر اسلامی جمہوریہ ایران نے جوہری معاہدے میں ایرانی مفادات کے تحفظ پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس معاہدے کے نفاذ کے لئے یورپی یونین کا وقت محدود ہے.

ان خیالات کا اظہار 'حسن روحانی' نے گزشتہ روز برطانوی وزیر اعظم 'تھریسامے' کے ساتھ ایک ٹیلی فونک رابطے میں گفتگو کرتے ہوئے کیا.

اس موقع پر انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران جوہری معاہدے پر عملدرآمد کرنے کے ساتھ اپنے قومی مفادات کو پیچھا کر رہا ہے مگر دوسرے فریقین اپنے وعدوں پر قائم نہیں تھے.

صدر روحانی نے جوہری مذاکرات کے دوران برطانیہ کے کردار کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ امریکہ کی علیحدگی غیرقانونی اور اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی 2231 قرارداد کی کھلی خلاف ورزی ہے.

انہوں نے ایران کے مفادات کے تحفظ کی ضمانت کے لئے یورپی یونین کے محدود وقت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ تیل، گیس اور پیٹروکیمیکل کی فروخت، بینکاری تعلقات اور سرمایہ کاری شعبوں میں ایران کے مفادات محفوظ ہوجانا چاہیئے.

انہوں نے منگل کے روز ایران، برطانیہ، فرانس، جرمنی کے وزرائے خارجہ اور یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کی سربراہ کی نشست کی اہمیت پر تبصرہ کرتے ہوئے اس امید کا اظہار کیا کہ منعقد ہونی والی نشست ایران کے مفادات کے تحفظ پر ضمانت دے سکی گی.

ایرانی صدر خطے کی پائیدار سلامتی میں جوہری معاہدے کے اہم کردار کے حوالے سے کہا کہ خطے میں مزید کشیدگی اور جنگ کی صورتحال پیدا ہوئی تو نقصان کو ذمہ دار خود امریکہ ہوگا.

انہوں نے جوہری معاہدے کے تحفظ میں تین یورپی ممالک کے کردار کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ کی نئی پابندیوں کے خلاف یورپ کے مزاحمت ایک قابل قدر اقدام تھا جو اس کی عالمی حیثیت کی مزید مضبوطی کا باعث ہوگیا.

صدر مملکت نے مشرق وسطی کی سیکورٹی کے تحفظ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ علاقائی پائیدار سلامتی کی فراہمی کے لئے تمام ممالک کی بھرپور کوششوں کی ضرورت ہے.

انہوں نے یمنی مظلوم عوام کی بری صورتحال کے حوالے سے کہا کہ ہم اقوام متحدہ اور یورپی ممالک کے ساتھ اس ملک کے بحران کے حل کے لئے باہمی تعاون پر تیار ہیں اور اس ملک کے بحران کا حل فوجی نہیں ہے.

برطانوی وزیر اعظم نے جوہری معاہدے میں ایران کی دیانتداری کی تعریف کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ ہمارا مقصد اس عالمی معاہدے کا تحفظ ہے اور ایرانی مفادات کی فراہمی کے لئے بھرپور کوشش کریں گے .

انہوں نے منگل کے روز بیلجیم کے دارالحکومت برسلز میں منعقد ہونی والی ایران، تین یورپی وزارئے خارجہ اور مغرینی کے درمیان نشست کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اس نشست میں یورپی ممالک نے مختلف تجویزوں کو تیار کی ہیں.

9393*274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@