ایران پڑوسی ممالک کیساتھ تعاون کو مزید فروغ دینے کیلئے پرعزم

تہران، 14 مئی، ارنا – صدر اسلامی جمہوریہ ایران نے کہا ہے کہ ہمارا ملک ہمسایہ ممالک کے ساتھ باہمی تعاون کی مزید مضبوطی پر عزم کا اعادہ کرتا ہے.

ان خیالات کا اظہار 'حسن روحانی' نے گزشتہ روز آرمینی نئے وزیر اعظم 'نیکل پاشینیان' کے ساتھ ایک ٹیلی فونک رابطے میں گفتگو کرتے ہوئے کیا.

اس موقع پر انہوں نے دونوں ممالک کے درمیان صلاحیتوں کے استعمال پر زور دیتے ہوئے کہا کہ ہم خوش ہیں کہ آرمینی قوم کے مستحکم عزم کے ساتھ اس ملک میں مثبت تبدیلیاں آ رہی ہے.

صدر روحانی نے ایران اور یورشیا یونین کے درمیان دستخط کرنے والے باہمی تعاون کے معاہدے کو دوطرفہ تعلقات کو فروغ کے لئے ایک مناسب موقع قرار دیتے ہوئے کہا کہ دونوں ممالک تجارتی، اقتصادی، زراعت اور دوسرے مسائل پر کثیرالجہتی تعلقات قائم کرسکتے ہیں.

انہوں نے مزید کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران دنیا اور علاقے میں پائیدار امن اور سلامتی برقرار رکھنا، سیاسی مذاکرات اور عالمی قوانین کے مطابق تنازعات کا حل چاہتا ہے.

انہوں نے امریکی صدر کی جانب سے ایران جوہری معاہدے کی علیحدگی کو عالمی معاہدے بالخصوص سلامتی کونسل کی 2231 قرارداد کی کھلی خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ اگر جوہری معاہدے میں ایرانی قوم کے مفادات تحفظ ہوئے تو اس معاہدے کو بچایا جا سکتا ہے.

آرمینی وزیر اعظم نے کہا کہ ہم اسلامی جمہوریہ ایران کے ساتھ مشترکہ مفادات کی بنا پر دوستانہ تعلقات کو فروغ دینے پر خاص اہمیت دے رہے ہیں.

انہوں نے دستخط ہونے والے معاہدوں کے نفاذ پر زور دیتے ہوئے کہا کہ علاقائی اور عالمی مسائل میں ایران اہم کردار ادا کرکے خطے میں امن اور سلامتی کی ترقی تمام ممالک کے مفاد میں ہے.

پاشینیان نے کہا کہ جوہری معاہدہ خطے میں استحکام اور سلامتی کا باعث ہے اور آرمینیا کبھی بھی ایران مخالف کسی بھی اقدام کی حمایت نہیں کرے گا.

9393*274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@