جوہری معاہدے کے دیگر فریقین اپنے وعدے نبھائیں: حکومت ایران کا مطالبہ

تہران، 11 مئی، ارنا - حکومت اسلامی جمہوریہ ایران نے جوہری معاہدے سے امریکی علیحدگی پر اپنے ردعمل میں کہا ہے کہ معاہدے کے دیگر فریقین بالخصوص تین یورپی ممالک ایٹمی سمجھوتے کے تحفظ کو یقینی بنانے کے ساتھ اپنے وعدوں پر عمل درآمد کا سلسلہ جاری رکھیں.

صدر 'حسن روحانی' کی سربراہی میں حکومتی کابینہ کا اجلاس گزشتہ روز تہران میں منعقد ہوا جس میں حکومت ایران نے امریکی علیحدگی پر بیان جاری کردیا.

اس میں بیان میں جوہری معاہدے کے دیگر فریقین بالخصوص فرانس، برطانیہ اور جرمنی پر زور دیا گیا کہ اس معاہدے سے متعلق اپنی ذمے داریوں کو ادا کریں.

حکومت ایران کے بیان کے مطابق، اس با وجود کہ یورپی ممالک کو امریکہ کی موجودگی بالخصوص ٹرمپ انتظامیہ کے منفی اقدامات کی خاطر جوہری معاہدے کے نفاذ میں مشکلات کا سامنا تھا مگر اب ہر صورت اور غیرمشروط طور پر اپنے وعدوں پر عمل درآمد کا سلسلہ جاری رکھیں.

بیان میں ایرانی قوم اور نظام کے خلاف ڈونلڈ ٹرمپ کی حالیہ ہرزہ سرائیوں کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ امریکہ صرف جوہری معاہدے کی خلاف ورزی نہیں بلکہ عالمی معاہدوں کی پامالی اس کا وطیرہ بن چکا ہے.

حکومت ایران نے کہا کہ ایرانی قوم مطمئن ہو کر ملک میں ترقی اور خوشحالی کے مقصد سے اپنی جد و جہد جاری رکھیں اور انھیں اس بات کا یقین ہو کہ حکومت قوم کے مفادات کے تحفظ کے لئے ایک انچ بھی پیچھے ہیں ہٹے گی.

یاد رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بدھ رات ایک بار پھر ایران اور جوہری معاہدے کے خلاف پرانے الزامات کو دہرا کر اس معاہدے سے امریکہ کی علیحدگی کا اعلان کردیا تھا.

ٹرمپ نے ایران کے خلاف پرانی ہرزہ سرائیوں کو دہراتے ہوئے کہا کہ وہ ایران پر دوبارہ پابندیاں لگانے کے حکم نامے پر دستخط کریں گے.

صدر اسلامی جمہوریہ ایران ڈاکٹر حسن روحانی نے بھی ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے جوہری معاہدے سے علیحدگی کے اعلان کے ردعمل میں کہا کہ آج سے یہ معاہدہ ایران اور اس پر دستخط کرنے والے 5 فریقین کے درمیان رہے گا.

انہوں نے ایرانی قوم کو اس بات کی یقین دہانی کرائی ہے کہ اگر موجودہ صورتحال میں ہمارے قومی مفادات کو تحفظ نہ ملے تو وہ ایک بار پھر قوم سے خطاب کرتے ہوئے ریاست اور حکومت کے تعمیری فیصلوں سے آگاہ کریں گے.

274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@