یورپ کیساتھ مل کر ایران جوہری معاہدے کو تحفظ فراہم کرین گے: چین کا اعلان

بیجنگ، 9 مئی، ارنا – چینی حکومت نے اس عزم کا اعادہ کیا ہے کہ وہ اپنے یورپی اتحادیوں سے مل کر ایران جوہری معاہدے کے تحفظ فراہم کرنے کے لیے تعاون جاری رکھے گی.

یہ بات چینی محکمہ خارجہ کے ترجمان 'گنگ شوانگ' نے آج بروز بدھ اپنی پریس کانفرنس میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے جوہری معاہدے سے نکلنے کے فیصلے پر اپنے ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہی.

انہوں نے کہا کہ جوہری معاہدہ2015 کو ایران اور عالمی قوتوں بشمول امریکہ کے درمیان طے پاگیا تھا جس اقدام بین الاقوامی سطح پر ایک سفارتی اقدام تھا.

انہوں نے بتایا کہ ایران جوہری معاہدہ ایک عالمی معاہدہ اورتمام فریقین کو جوہری معاہدے کے تناظر میں اپنے کئے گئے وعدوں پر قائم رہنا چاہیے.

چینی عھدیدار نے اس معاہدے کی اہمیت کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے ایک قرارداد کے تحت اس معاہدے کی تصدیق کردیا ہے.

انہوں نے مزید بتایا کہ ہمیں یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ مشرقی وسطی ایک حساس علاقہ ہے جہاں ان کے امن و استحکام عالمی برادری کے لیے اہم ہے.

انہوں نے کہا کہ ٹرمپ کا فیصلہ چین اور ایران کے درمیان باہمی تجارتی تبادلوں پر کوئی منفی اثرنہیں پرے گا اور دونوں ممالک بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی کے بغیرگزشتہ کی طرح باہمی تجارتی تعلقات جاری رکھنے کی کوشش کریں گے

یاد رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے گزشتہ رات ایک بار پھر ایران اور جوہری معاہدے کے خلاف پرانے الزامات کو دہرا کر اس معاہدے سے امریکہ کی علیحدگی کا اعلان کردیا.

ٹرمپ نے ایران کے خلاف پرانی ہرزہ سرائیوں کو دہراتے ہوئے کہا کہ وہ ایران پر دوبارہ پابندیاں لگانے کے حکم نامے پر دستخط کریں گے.

صدر اسلامی جمہوریہ ایران ڈاکٹر حسن روحانی نے بھی ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے جوہری معاہدے سے علیحدگی کے اعلان کے ردعمل میں کہا کہ آج سے یہ معاہدہ ایران اور اس پر دستخط کرنے والے 5 فریقین کے درمیان رہے گا.

یورپی یونین کی چیف خارجہ پالیسی نے ایران جوہری معاہدے سے امریکی صدر کی علیحدگی کے ردعمل میں کہا ہے کہ یورپی ممالک اس معاہدے کا پابند رہیں گے.

9410٭274٭٭

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@