جوہری معاہدہ: امریکہ کے بغیر ہمارے مفاد حاصل ہوئے تو ٹھیک، نہ تو بندوبست کریں گے: ایرانی صدر

تہران، 8 مئی، ارنا - صدر اسلامی جمہوریہ ایران نے کہا ہے کہ اگر ہمیں جوہری معاہدے سے امریکہ کے بغیر اپنے مفاد حاصل ہوں تو ٹھیک دوسری صورت میں ایران حالات کے تناظر میں اپنا بندوبست کرے گا.

یہ بات ڈاکٹر 'حسن روحانی' نے گزشتہ روز شمال مشرقی صوبے خراسان رضوی کے دورے کے موقع پر صوبائی حکام کی ایک اعلی نشست میں گفتگو کرتے ہوئے کہی.

انہوں نے کہا کہ ہم اس لئے جوہری معاہدے پر رضامند ہوئے کیونکہ چاہتے تھے کہ ایرانی قوم کے خلاف ظالمانہ پابندیوں کا خاتمہ ہوں مگر امریکی حکمرانوں کا مقصد خطے میں ایران کے اثر و رسوخ، ہماری طاقت اور خودمختاری کو محدود کرنا ہے.

صدر مملکت نے مزید کہا کہ اگر امریکہ کی غیرموجودگی میں جوہری معاہدے کے ذریعے ہم اپنے مفادات حاصل کرسکے تو اچھی بات ہے اور اگر ایسا نہیں ہوا تو ہم ضروری فیصلہ کریں گے.

انہوں نے کہا کہ اگر دنیا کو اس بات کی فکر ہے کہ ایران جوہری ھتھیار بناسکتا ہے تو ہم دنیا کو یہ بتانا چاہتے ہیں کہ ہم نے جوہری معاہدے کے ذریعے ایسی قیاس آرائیوں کو ختم کردیا ہے.

ایرانی صدر نے مزید کہا کہ امریکہ، جوہری معاہدے کو توڑنا چاہتا ہے جبکہ دوسرے ممالک کا ایران پر اعتماد بڑھ گیا ہے اور ان کا مطالبہ ہے کہ ایٹمی سمجھوتے کو ہر صورت میں بچایا جائے.

یہ بات قابل ذکر ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ نے 12 مئی کو ایران کے ساتھ جوہری معاہدے کی توثیق کرنے یا نہ کرنے کا فیصلہ کرنا تھا مگر انہوں نے گزشتہ رات اپنے ایک ٹوئٹر پیغام میں کہا کہ وہ آج اپنے حتمی فیصلے کا اعلان کریں گے.

دریں اثناء اعلی ایرانی قیادت نے اس عزم کا اعادہ کیا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کی ممکنہ علیحدگی پر بھرپور ردعمل دیا جائے جس میں ایران کی بھی جوہری معاہدے سے علیحدگی اور این پی ٹی معاہدے سے نکلنا شامل ہیں.

274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@