ایران، اسپین کے درمیان تیل کی تجارت پر معاہدہ

تہران، 8 مئی، ارنا - ایران اور اسپیس نے تیل اور گیس کے صنعتوں اور ٹیکنالوجی کی منتقلی میں تعاون کے لئے مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کئے ہیں.

اس معاہدے پر وزارت خارجہ کے ڈائریکٹر جنرل برائے یورپ اور وزارت پٹرولیم کےنمائندے 'حسینی اسماعیلی' اور اسپین کے وفد کے سربراہ ماریا مرسیسس منڈرو نے دستخط کئے.

مشترکہ ورکنگ گروپ کے اجلاس میں وزارت خارجہ کا بنیادی مقصد کمپنیوں کا آپس میں مختلف شعبوں میں تعاون کے حصول کی حوصلہ افزائی کرنا ہے، تیل کی بحالی کے شعبوں میں اضافہ، سامان کی فراہمی، پیٹرو کیمیکل، ریفائنری کے شعبوں میں تعاون اور تکنیکی علم کا اشتراک کرنے کے ساتھ ساتھ سامان کی فراہمی کرنا بھی شامل تھا.

بین الاقوامی اور تجارتی امور کے نائب پٹرولیم وزیر امیر حسین زمانمانیا نے اجلاس میں کہا کہ ایران میں تیل اور گیس کی وسیع وسائل موجود ہیں

انہوں نے کہا کہ موجودہ پیداوار کی صلاحیت تقریبا 4 ملین بیرل تیل اور 40 ارب کیوبک میٹر گیس ہیں، جو تسلی بخش نہیں ہے

زمانانیا نے بتایا کہ ایران میں تیل اور گیس کی صنعتوں کی تعمیرات کو بحال کرنے کی ضرورت ہے ، مزید غیر ملکی اداروں کی شرکت اور اس شعبے میں سرمایہ کاروں کو جذب کرنے کے لئے مناسب اور وسیع زمین موجود ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ٹیکنالوجی اور مینجمنٹ کی خدمات کو منتقل کرنے کے میدان میں ایران کو اسپین جیسے غیر ملکی شراکت داروں کے تعاون کی ضرورت ہے

اجلاس میں، اسپین انسٹی ٹیوٹ برائے تجارت اور سرمایہ کاری کے نمائندوں نے 'آئیکسیکس' تیل، گیس، ریفائنری، تقسیم اور پٹرولیم صنعتوں کے شعبوں میں اسپین کی کمپنیوں کے نمائندوں کے ساتھ تکنیکی گفتگو کی.

1*271**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@