ایران جوہری معاہدے کا تحفظ ناگزیر، پیوٹن کا نیتن یاہو کو مشورہ

ماسکو، 1 مئی، ارنا - روسی فیڈریشن کے صدر 'ولادیمیر پیوٹن' نے صہیونی وزیراعظم کو مخاطب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایران جوہری معاہدے کا تحفظ ناگزیر ہے.

روس کے صدارتی محل کرملن کے مطابق، صدر پیوٹن نے نیتن یاہو کے ساتھ ایک ٹیلی فونک رابطے میں جوہری معاہدے سے متعلق تازہ ترین صورتحال پر تبادلہ خیال کیا.

پیوٹن نے اس بات پر زور دیا کہ ایران جوہری معاہدے کا تحفظ ضروری ہے. یہ معاہدہ عالمی اور خطی امن و سلامتی کے لئے نہایت اہم ہے لہذا تمام فریقین کو چاہئے کہ اس سمجھوتے پر من و عن عمل کریں.

فریقین نے اس ٹیلی فونک رابطے میں جو صہیونی وزیراعظم کی جانب سے کیا گیا تھا مشرق وسطی کی حالیہ صورتحال بالخصوص شام سے متعلق مسائل پر بھی گفتگو کی.

یاد رہے کہ صہیونی وزیراعظم نے نام نہاد 'خفیہ ایٹمی فائلیں' افشا کی ہیں جس میں دعوی کیا گیا ہے کہ ایران نے خفیہ طور پر ایٹمی ہتھیار بنانے کی کوشش کی تھی.

نیتن یاہو نے یہ دعویٰ کیا کہ اسرائیل نے ہزاروں ایسی دستاویزات حاصل کی ہیں جن سے ظاہر ہوتا ہے کہ ایران نے دنیا کو یہ کہہ کر دھوکہ دیا کہ اس نے کبھی بھی ایٹمی ہتھیار بنانے کی کوشش نہیں کی.

نیتن یاہو کے من گھڑت دعوے ایسے وقت سامنے آرہے ہیں جبکہ قائد اسلامی انقلاب حضرت آیت اللہ سید علی خامنہ ای جو اسلامی جمہوریہ ایران کے سب سے اعلی رہنما ہیں نے ایک تاریخی فتوے کے تحت جوہری ھتھیاروں کے استعمال کو حرام قرار دیا ہے.

اسلامی جمہوریہ ایران کے پُرامن جوہری پروگرام بالکل شفاف اور مختلف بین الاقوامی اداروں کی رپورٹس بالخصوص عالمی جوہری توانائی ادارے (IAEA) نے بھی بارہا ایران کے پُرامن کارکردگی پر اطمینان کا اظہار کیا ہے.

274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@