ایران کے طبی معیار کو عالمی سطح پر روشناس کرایا جاسکتا ہے

بیجنگ، 1 مئی، ارنا - چینی دارالحکومت کی یونیورسٹی کے ایرانی پروفیسر نے کہا ہے کہ ایران میں جڑی بوٹیوں سے بنائی جانے والی دوائیوں کا سلسلہ قدیم دور سے جاری ہے اور ہم دنیا کو اس سے مستفید کر سکتے ہیں.

یہ بات ڈاکٹر 'امین ہومن کاظمی' جو ورلڈ فیڈریشن آف آکو پنکچر کے نائب صدر بھی ہیں، نے بیجنگ میں منعقد ہونے والی جڑی بوٹی دوائیوں سے متعلق ماہرین کی نشست کے موقع پر ارنا نیوز ایجنسی کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی.

انہوں ںے کہا کہ ایران جڑی بوٹیوں کے ذریعے دوا سازی میں اچھی صلاحیت رکھتا ہے لہذا ہم اسی طبی معیار اور صلاحیت کے ذریعے اپنی ادویات اور دیگر پیدواری اشیا کو دنیا کے مختلف ممالک برآمد کر سکتے ہیں.

انہوں نے مزید کہا کہ جڑی بوٹی کی دوائیوں کے حوالے سے مختلف ممالک بالخصوص چین کے اہم تجربات ہیں جن سے استفادہ کرنا چاہئے اور اس ذریعے ہم اپنی ادویات کے معیار کو مزید بہتر بنا سکتے ہیں.

پروفیسر ہومن کاظمی کا کہنا تھا کہ اسلامی جمہوریہ ایران قدیم دورے سے ایسی دوائیوں اور جڑی بوٹیوں سے تیار ہونے والی ادویات میں فعال ہے لہذا ہم اپنی مہارت سے جدید دور کی ادویات کے ساتھ مریضوں کو دیسی ادویات بالخصوص جڑی بوٹیوں سے تیار ہونے والے ادویات کو پیش کرسکتے ہیں.

274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@