القدس عالم اسلام کا حقیقی دارالخلافہ، ٹرمپ کی غلطیاں بے شمار ہیں: عراقچی

تہران، 31 جنوری، ارنا - ایرانی وزیر خارجہ کے مشیر برائے سیاسی امور نے کہا ہے کہ القدس کو صہیونی دارالحکومت تسلیم کرنے کا ڈونلڈ ٹرمپ کا فیصلہ اس کی بے شمار غلطیوں کا تسلسل ہے جبکہ یقینی طور پر بیت المقدس عالم اسلام کا حقیقی دارالحکومت ہے.

ان خیالات کا اظہار 'سید عباس عراقچی' نے بدھے کے روز تہران میں منعقدہ ایک بین الاقوامی کانفرنس میں خطاب کرتے ہوئے کیا جس کا عنوان 'القدس، ادیان کا پُرامن دارالحکومت' تھا.

اس موقع پر انہوں نے کہا کہ القدس، عالم اسلام کا دارالحکومت ہے اور یہ امت مسلمہ کو واپس مل جائے گا.

اس موقع پر انہوں نے کہا کہ منعقدہ کانفرنس دشمنوں کے مشترکہ موقف کے خلاف اسلامی دنیا کے مذہبی رہنماؤں اور مختلف ادیان کے پیروکاروں کے درمیان باہمی اتحاد اور یکجہتی قائم کرنے کے لئے ایک سنہری موقع ہے.

عراقچی نے القدس شریف کو مسلمانوں کا پہلہ قبلہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ القدس اسلامی دنیا کا اہم موضوع ہے اور اسے ہمیشہ زندہ رکھا جانا چاہئے.

انہوں نے القدس شریف پر ٹرمپ کے بیوقوفانہ فیصلے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران امریکی صدر کے ایسے جاہلانہ فیصلے کی مذمت کرکے القدس میں کسی بھی تبدیلی سے مقابلہ کرے گا.

انہوں نے کہا کہ اسلامی دنیا کے دشمن عالمی برادری بالخصوص مسلمانوں کو اپنے اصلی مقاصد سے دور کرنے کے لئے بڑے مسائل سمیت امریکی صدر کے بیوقوفانہ فیصلہ پیدا کر رہے ہیں.

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ دہشتگردی گروہوں کی تشکیل، اندرونی جنگ اور تفرقہ ڈالنے سے دشمنوں کا مقصد مسلمانوں کو اپنے اصلی مسائل سے دور کرنا ہے.

انہوں نے اسلامی جمہوریہ ایران کی میزبانی میں القدس شریف پر منعقدہ کانفرنس کو تمام ادیان کے پیروکاروں کے درمیان باہمی اتحاد اور یکجہتی کے لئے ایک سنہری موقع قرار دے دیا.

نائب ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کے موقف کے مطابق، القدس شریف فلسطین کے دارالخلافہ رہے گا اور ہم اس حقیقت کی مسلسل حمایت اور اس کے خلاف کسی بھی تبدیلی سے مقابلہ کریں گے.

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ القدس مختلف ادیان کے پیروکاروں کے لئے ایک ثقافتی اور قابل احترام مقام ہے اور ٹرمپ کے جاہلانہ فیصلہ اقوام متحدہ کی قراردادوں کی کھلی خلاف ورزی ہے.

انہوں نے کہا کہ بیت المقدس فلسطین کے ایک ثقافتی اور تہذیبی شہر ہے لہذا تمام مسلمانوں کی اہم ذمہ داری اس کی آزادی اور علاقائی سالمیت کے لئے بھرپور کوشش کرنا ہے.

عراقچی نے اسلامی مواصلات اور تہذیب کی تنظیم سے دوسرے ادیان کے پیروکاروں کے لئے القدس کو فلسطین کے اصلی دارالخلافہ کے تعارف کرنے کی پرجوش کوششوں کا مطالبہ کیا.

یاد رہے کہ 'القدس ادیان کے پرامن دارالحکومت' کے عنوان سے عالمی کانفرنس کا آج بروز بدھ ایرانی دارالحکومت تہران میں منعقد ہوئی جس میں اعلی حکام نے شرکت کیں.

9393*274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@