ایران، عراق اور مالی کا بیت المقدس کی حمایت پر زور

تہران، 20 دسمبر، ارنا - اسلامی جمہوریہ ایران، عراق اور مالی کے اسپیکروں نے ڈونلڈ ٹرمپ کے حالیہ بیت المقدس کے حوالے سے فیصلے کی مذمت کرتے ہوئے القدس کی بھرپور حمایت جاری رکھنے پر زور دیا ہے.

تفصیلات کے مطابق، تہران میں منعقدہ اسلامی تعاون تنظیم کی پارلیمانی یونین کے غیرمعمولی اجلاس کے موقع پر تینوں ممالک کے اسپیکروں نے مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے مزید کہا کہ امریکی سفارتخانے کو تل ابیب سے بیت المقدس منتقل کرنے کا ٹرمپ فیصلہ اسلام دشمن پالیسی کی علامت ہے.

اس موقع پر ایرانی سپیکر 'علی لاریجانی' نے کہا امریکہ کا دہشت گردوں کی حمایت کسی سے پوشیدہ نہیں ہے اور اس موقع پر سب اسلامی ممالک کو چاہیئے کہ امریکہ کی اس قسم کےاقدامات کے خلاف متحد ہوجائیں.

انہوں نے خطے میں عوامی اسلامی بیداری کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ استکباری طاقتیں خطے میں عوام میں اٹھنے والے بیداری کے لہر سے خوفزدہ ہے اس لئے وہ مقبوضہ فلسطین میں اس طرح کے اقدامات کررہے ہیں.

سعودی عرب کی صیہونی حکومت کے ساتھ روابط کے حوالے سے پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ سعودی عرب کی اس طرح کی پالیسیان امت اسلام کے لئے نقصان دہ ہوگا.

انہوں نے کہا فلسطینی عوام نے ثابت کیا ہے کہ وہ صیہونی حکومت کی وحشیانہ کاروائیوں سے خوف زدہ نہیں ہے اور وہ اپنی سرزمین کی آزادی کے لئے کوئی بھی قربانی دینے کے لئے تیار ہیں.

عراق کے پارلیمانی سپیکر سلیم الجبوری نے بھی کہا کہ ہم بیت الامقدس کے بارے میں امریکہ کے ایک طرفہ فیصلہ کی مزمت کرتے ہیں اور سمجھتے ہیں کہ اسلامی ممالک امریکہ سے اقتصادی سیاسی اور سفارتکاری کے زریعہ مقابلہ کرسکتے ہیں.

1*274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@