ایران کا امریکی نمائندے کے الزامات پر احتجاج، سوئس سفیر کی طلبی

تہران، 19 دسمبر، ارنا - اسلامی جمہوریہ ایران نے امریکہ کے سفارتی معاملات کو دیکھنے والے سوئٹزرلینڈ کے سفیر کو طلب کرکے اقوام متحدہ میں متعین خاتون امریکی نمائندے کے حالیہ من گھڑت الزامات پر اپنا شدید احتجاج ریکارڈ کرایا.

ترجمان دفترخارجہ بہرام قاسمی کے مطابق، اسلامی جمہوریہ ایران کی وزارت خارجہ کے ڈائریکٹر جنرل برائے امریکی امور نے سوئس سفیر کو احتجاجی مراسلہ حوالے کردیا.

سنئیر ایرانی سفارتکار نے امریکی نمائندے کے حالیہ الزامات کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ جعلی اور بے بنیاد دعووں کے ذریعے ایران پر یمن کو میزائل فراہم کرنے کا الزام عائد کرتا ہے.

اس کے علاوہ انہوں نے اقوام متحدہ میں بغیر ثبوت اور شواہد کے ایران کو یمن میں ھتھیاروں کی فراہمی کے حوالے سے ذمہ دار ٹھیرانے کے امریکی الزامات کو مضحکہ خیز اور بے بنیاد قرار دیا.

بہرام قاسمی نے یمنی عوام کے قتل عام میں امریکہ کی براہ راست مداخلت کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ سعودی عرب کو فروخت کئے جانے والے اربوں ڈالر کے مہلک ھتھیاروں سے یمن میں انسانی بحران پیدا ہوگیا ہے.

انہوں نے کہا کہ امریکی حکومت، یمن کے حوالے سے اقوام متحدہ کی سیکورٹی کونسل کی قراردادوں کی خلاف ورزی کر رہا ہے اور وہ خطے میں بعض جابر ممالک کی حمایت اور دوسرے ممالک پر الزام لگا کر عالم رائے عامہ کو اصل حقائق سے ہٹانا چاہتا ہے.

قاسمی نے ایران مخالف امریکی نمائندے کے حالیہ الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ اس اقدام کے ساتھ خطے میں جنگ اور تشدد کو بڑھانا چاہتا ہے جبکہ وہ حقیقت خطے میں نئے بحرانوں کا بھی ذمہ دار ہوگا.

ایران میں امریکی معاملات دیکھنے والے سوئیس سفیر نے اس بات کی یقین دہانی کرائی ہے کہ وہ جلد امریکی وزارت خارجہ اس معاملے سے آگاہ کریں گے.

خیال رہے کہ خاتون امریکی نمائندہ نیکی ہیلی نے گزشتہ دنوں اقوام متحدہ میں ایران پر سیکورٹی کونسل کی قرارداد کی خلاف ورزی کرنے کا الزام لگایا.

9410*274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@