ایران کا انسداد اسمگلنگ کیلئے پاکستان اور ترکی کیساتھ تعاون بڑھانے پر زور

اسلام آباد، 19 دسمبر، ارنا - اسلامی جمہوریہ ایران کے نائب وزیر خزانہ نے کہا ہے کہ ایران، پاکستان اور ترکی کے ساتھ مشترکہ تجارتی سرگرمیوں کو توسیع دینے کے مقصد سے انسداد اسمگلنگ کے شعبے میں تعاون کو بڑھانے کے لئے پُرعزم ہے.

یہ بات 'سید حسین میر شجاعیان' نے پاکستان میں اقتصادی تعاون تنظیم (ECO) کی پلاننگ کونسل کے 28 ویں اجلاس کے موقع پر ارنا کے نمائندے کے ساتھ خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہی.

انہوں نے مزید کہا کہ تینوں ممالک سرحدی تجارتی سرگرمیوں کے فروغ ، غیر قانونی تجارت کی حوصلہ شکنی اور سرحدی مشترکہ مارکیٹوں کے قیام کیلئے پرعزم ہیں.

انہوں نے کہا کہ تینوں ممالک نے اکو تنظیم کے سرگرمیوں کو مزید توسیع دینے کے لئے اپنے باہمی تعاون کے فروغ کے لئے کوشاں ہے.

اکو تنظیم میں موجود چلینچز سے مقابلے پر زور دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس اجلاس میں موسمیاتی تبدیلیوں سے رونما ہونے والے چلینچز سے مقابلہ کے لئے اکو تنظیم نے ایک منصوبہ بندی کی ہے جس پر کام ہورہا ہے.

انہوں نے کہا کہ اکو ممالک کے درمیان اقتصادی اور تجارتی روابط کے فروغ کے لئے مختلف مواصلاتی نظام اور کریڈور زیر غور ہے جس پر عملدرآمد کے لئے عملی اقدامات کی ضرورت ہے.

اقتصادی تعاون تنظیم یا ای سی او ایک بین الاقوامی تنظیم ہے جس میں 10 ایشیائی ممالک شامل ہے.

یہ رکن ممالک کے درمیان میں تجارت اور سرمایہ کاری کے مواقع ترتیب دے کر انہیں ترقی کی شاہراہ پر گامزن کرنے کے لیے ایک پلیٹ فارم مہیا کرتی ہے.

اس کے رکن ممالک میں افغانستان، آذربائیجان، ایران، قازقستان، کرغزستان، پاکستان، تاجکستان، ترکی، ترکمانستان اور ازبکستان شامل ہیں.

ای سی او کا صدر دفتر ایران کے دارالحکومت تہران میں واقع ہے اس تنظیم کا مقصد یورپی اقتصادی اتحاد کی طرح اشیاء اور خدمات کے لیے واحد مارکیٹ تشکیل دینا ہے.

1*274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@