امریکہ، طیارے خریدنے کیلیے ایرانی ادائیگیاں ضبط کرنا چاہتا ہے: نائب ایرانی وزیر سڑک

تہران، 17 دسمبر، ارنا - نائب ایرانی وزیر سڑک اور شہری ترقی برائے بین الاقوامی امور نے ایران میں طیاروں کی فروخت کے معاہدوں کی نگرانی کے حوالے سے امریکی کانگریس کے نئے بل کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس منصوبے کے2 اہم مقصد، مالیاتی اداروں کو ایران کے ساتھ کسی بھی قسم کے معاہدے سے خوفزدہ کرنا اور اس حوالے سے ایرانی ادائیگیاں ضبط کرنا ہے.

یہ بات 'اصغر فخریہ کاشان' نے ہفتہ کے روز ایرانی دارالحکومت میں گفتگو کرتے ہوئے کہی.

انہوں نے مزید بتایا کہ امریکی حکومت ہر تین ماہ ایران میں امریکی طیاروں کی فروخت کے لیے کانگریس کو ایک مالی رپورٹ پیش کرنا ناگزیر ہے.

نائب ایرانی وزیر نے کہا کہ امریکی کانگریس نے 2 دن پہلے 252 موافق اور 167 مخالف ووٹوں کے ساتھ ایک بل کی منظوری کی جس کے تحت طیاروں کی فروخت کے لیے ایران کے ساتھ کسی بھی مالی معاہدہ اس کانگریس کی مکمل نگرانی میں انجام ہو جانا چاہیے.

انہوں نے کہا کہ امریکی کانگریس کی جانب سے اس بل کی منظوری کی صورت میں ایران اور بوئینگ اور ایئرباس کمپنیوں کے درمیان طیاروں کی خریداری کے معاہدے مشکل کا شکار ہوجائیں گے اور یہ جوہری معاہدے کی روح پر امریکہ کی کھلی خلاف ورزی ہے.

انہوں نے بتایا کہ جوہری معاہدے کے ایک شق میں ایران میں امریکی طیاروں کی فروخت سے مختص ہے جس میں امریکی حکومت نے ایران کو امریکی ہوائی جہازوں کی فروخت کی اجازت دینے کے علاوہ ایران میں طیاروں کے پرزے اور اس سے متعلقہ آلات کی فروخت کی اجازت دی ہے.

فخریہ کاشان نے کہا کہ اگر امریکی سینیٹ، گانگریس کے اس بل کی توثیق کرے تو ایران،5+1 گروپ کے مشترکہ کمیشن میں امریکہ کے اس اقدام کے خلاف مقدمہ درج کرے گا.

انہوں نے کہا کہ امریکہ کو بوئنگ اور ایئربس کمپینیوں کو اپنے اس فیصلے سے مطلع کرنا چاہیے اور اس بل کی منظوری کی صورت میں امریکہ ایک طرفہ اور غیر قانونی طور پر اس قانون کی واضح خلاف ورزی نہیں کر سکتا ہے.

یاد رہے کہ ایران نے 80 طیاروں کی خریداری کے لیے بوئنگ کے ساتھ ایک معاہدے پر دستخط کیا جس کے پہلے طیارے 2018 کو ایران کے حوالے کردیا جائے گا.

واضح رہے کہ ایران اور ائیر بس کے درمیان 100 طیاروں کی خریداری کے لیے ایک معاہدے پر دستخط کیا گیا جو ابھی بھی 3 طیارے ایران کے حوالے کردیا گیاہے.

9410*274**

ہميں اس ٹوئٹر لينک پر فالو کيجئے. IrnaUrdu@