ظریف کا ایران مخالف امریکی نمائندے کے الزامات پر شدید ردعمل

تہران، 16 دسمبر، ارنا - ایرانی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ امریکی حکام خطے میں اپنے جنگی جرائم کو چھپانے کے لئے لوہے کے ٹکڑے کو دیکھا کر اسلامی جمہوریہ ایران پر من گھڑت الزامات لگارہے ہیں.

ان خیالات کا اظہار 'محمد جواد ظریف' نے ہفتہ کے روز تہران میں انسانی حقوق پر منعقدہ قومی سمینار کے موقع پر صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کیا.

انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ میں خاتون امریکی مندوب کے ایران مخالف بیانات ناقابل یقین ہیں اور ان کا مقصد خطے میں امریکہ کے جرائم اور ٹرمپ کی جانب سے بیت المقدس کو ناجائز صہیونی ریاست کے دارالحکومت تسلیم کرنے کے فیصلے کو نظر انداز کرنا ہے.

ظریف نے کہا کہ تمام دنیا بالخصوص امریکہ اور ناجائز صہیونی ریاست کے بعض اتحادیوں نے ٹرمپ کے جاہلانہ اقدام کی مذمت کی ہیں اور گزشتہ روز امریکی مطالعہ انسٹی ٹیوٹ نے اعلان کردیا کہ داعش دہشتگردوں نے امریکہ اور سعودی عرب کے ہتھیاروں سے استعمال کیا ہے.

انہوں نے مزید کہا کہ جبکہ ایک ملک یمنی مظلوم عوام کے قتل عام کے لئے سعودی عرب کے ہتھیاروں کو فراہم کرکے اسلامی جمہوریہ ایران پر بے بنیاد اور من گھرٹ الزامات لگاتا ہے.

انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کے تحقیقاتی شعبے نے اعلان کردیا کہ یمنی بے گناہ اور نہتے عوام پر بمباری کرنے والے ہتیھاروں میں امریکی بم اور میزائل موجود تھے جو ایک واضح حقیقت ہے کسی بھی اس کا انکار نہیں کرسکتا ہے.

یاد رہے کہ خاتون امریکی مندوب نیکی ہیلی نے گزشتہ دنوں محکمہ دفاع میں سعودی عرب پر یمن سے داغے گئے نام نہاد میزائل کے ٹکڑے دیکھائے اور اس کے ساتھ ہی یمن میں ہتھیاڑوں کی فراہمی کے حوالے سے ایران پر الزامات بھی لگائے.

9393*274**

ہميں اس ٹوئٹر لينک پر فالو کيجئے. IrnaUrdu@