ایران اور ترکی دہشتگردی کیخلاف یکساں مؤقف رکھتے ہیں، صدر روحانی کی اردوان سے ملاقات

تہران، 14 دسمبر، ارنا - ایرانی صدر نے کہا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران ترکی دہشتگردی کیخلاف یکساں مؤقف رکھتے ہیں اور ہم اس کے علاوہ ترکی کے ساتھ دوطرفہ اور علاقائی سطح پر تعاون کو مزید بڑھانے کے لئے بھی آمادہ ہیں.

ان خیالات کا اظہار صدر مملکت ڈاکٹر 'حسن روحانی' نے گزشتہ روز ترک شہر استنبول میں اسلامی تعاون تنظيم (OIC) کے غیرمعولی سربراہی اجلاس کے موقع پر اپنے ترک ہم منصب 'رجب طیب اردوان' کے ساتھ ایک ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کیا.

اس موقع پر انہوں نے اسلامی جمہوریہ ایران میں تیل، گیس، صنعت اور نقل و حمل کے شعبوں میں اچھی سرمایہ کاری کے مواقع کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ہم اپنے ملک میں ترک سرمایہ کاروں کی شراکت داری کا خیر مقدم کرتے ہیں.

صدر روحانی نے کہا کہ ہم انقرہ کے ساتھ اقتصادی تعلقات کو بڑھانے پر آمادہ ہیں اور جلد سے دونوں ملکوں کی قومی کرنسیوں کے ساتھ تجارت کے تبادلے کے حوالے سے معاہدے پر عملدرآمد کرنا لازمی ہے.

انہوں نے القدس شریف پر امریکی صدر کے حالیہ جاہلانہ فیصلے کو مسلمانوں اور مستقل قوموں کے بے بسی کی وجہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ واشنگٹن کے ایسے شیطانی اقدام اسلامی برادری کے مطالبات کی کھلی خلاف ورزی ہے.

انہوں نے اسلامی دنیا کے خلاف امریکہ اور ناجائز صہیونی ریاست کی مسلسل سازشوں کو اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ خوش قسمتی سے تمام دنیا کے مسلمان مقبوضہ فلسطین کا دفاع کرکے ایسی شیطانی سازش کے خلاف نعرہ بلند کر رہے ہیں.

ایرانی صدر نے ترک شہر استنبول میں القدس پر اسلامی تعاون تنظيم (OIC) کے وزرائے خارجہ کونسل کے غيرمعمولی اجلاس کے انعقاد کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ مسلمانوں اس اجلاس کے ذریعہ مسئلہ فلسطین کے حل پر امید رکھتے ہیں اور امریکہ کو ایسے ناپاک اقدام کو جاری کرنے کی اجازت نہیں دینی چاہیئے.

انہوں نے شام میں امن اور استحکام کی مضبوطی کے لئے مشترکہ باہمی تعاون پر زور دیتے ہوئے کہا کہ علاقائی ممالک بالخصوص اسلامی جمہوریہ ایران اور ترکی خطے میں دہشتگردوں سے نمٹنے کے لئے طویل المدت باہمی تعاون کریں.

صدر مملکت نے حالیہ سالوں میں دونوں ممالک کے درمیان قریبی تعلقات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ سوچی کا اجلاس نے ثابت کردیا کہ باہمی تعاون کے ساتھ خطے میں مسائل کے حل کے لئے مثبت قدم اٹھ کر سکتے ہیں.

اردوان نے اسلامی تعاون تنظيم (OIC) کے وزرائے خارجہ کونسل کے غيرمعمولی اجلاس میں رکن ممالک کے صدور کی عظیم موجودگی کو اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ ایسی پرجوش موجودگی مسئلہ فلسطین پر اسلامی ممالک کے مشترکہ مؤقف کی علامت ہے اور ہم مظلوم فلسطینی قوم کے حقوق کی حمایت کر رہے ہیں.

ترک صدر نے دونوں ممالک کے درمیان کثیر الجہتی تعلقات کی توسیع دینے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ باہمی تعاون کے ساتھ خطے میں دہشتگردوں کو تباہ کر سکتے ہیں.

9393*274**

ہميں اس ٹوئٹر لينک پر فالو کيجئے. IrnaUrdu@