مشرقی بیت المقدس کو فلسطین کا دارالحکومت سمجھتے ہیں: ترک وزیر خارجہ

استنبول، 13 دسمبر، ارنا - ترک وزیر خارجہ 'مومود چاوش اوگلو' نے کہا ہے کہ مشرقی بیت المقدس کو فلسطین کا دارالحکومت سمجھتے ہیں.

يہ بات انہوں نے اسلامي تعاون تنظيم (OIC) كے وزرائے خارجہ كونسل كے غيرمعمولي اجلاس كے موقع پر كہي.

اس موقع پر انہوں نے كہا كہ گزشتہ سالوں ميں بيت المقدس كو فلسطينيوں كے دارالحكومت كے اعلان كے حوالے سے كوتاہياں ہوئي ہيں اب ہم اس مقصد تك پہنچنے كے لئے دنيا كے سب ممالك كو دعوت ديتے ہيں.

تركي كے وزير خارجہ نے مزيد كہا اس اجلاس ميں فلسطين كے خلاف ظلم ركوانے كے لئے سب كو اپنا كردار ادا كرنا ہوگا.

امريكي صدر ڈونلڈ ٹرمپ كا بيت المقدس كو ناجائز صيہوني حكومت كا دارالحكومت بنانے كے اعلان كے رد عمل ميں انہوں نے كہا كہ اس فيصلے سے بين الاقوامي برادري سميت مسلمانوں كے جذبات مجروح ہوئے ہيں اور ہم سمجھتے ہيں كہ امريكہ نے اس فيصلے سے بيت المقدس پر صيہونيوں كے ناجائز تسلط كو قانوني جواز دينے كي كوشش كي ہے.

انہوں نے مزيد كہا ہمارے لئے امريكي صدر كا فيصلہ كوئي اہميت نہيں ركھتا كيوں كہ ہم سمجھتے ہيں بيت المقدس سب ابراہيمي اديان كے لئے اہميت ركھتا ہے.

بيت المقدس كي حمايت اور ڈونلڈ ٹرمپ كے حاليہ فيصلے كے خلاف موثر حكمت عملي بنانے كے لئے اسلامي تعاون تنظيم (OIC) كے سربراہوں كا غيرمعمولي اجلاس گذشتہ روز ترك شہر استنبول ميں شروع ہوا ہے.

او آئي سي كے سربراہي اجلاس ميں ايران ، فلسطين ، آذربائيجان، لبنان اور افغانستان كے صدورسميت قطري اور اردني امير بھي شريك ہيں.

اس اہم اور غيرمعمولي اجلاس ميں بنگلہ ديش، انڈونيشيا، كويت،ليبيا، لبنان، صوماليہ، سوڈان اور ٹوگو سميت 48 ممالك كے رہنما شريك ہيں.

اسلامي تعاون تنظيم (OIC) كے غيرمعمولي سربراہي اجلاس كے دوران بيت المقدس كي حفاظت كے لئے ايك قرارداد پيش كي جائے گي جس كو بھاري اكثريت سے منظور كيا جائے گا.

اسلامي رہنماؤں كے اجلاس كے بعد مشتركہ اعلاميہ جاري ہوگا جس ميں اسلامي تعاون تنظيم كا رسمي مؤقف سامنے آئے گا.

اسلامي تعاون تنظيم كے صدر كي دعوت پر قبرص كي ترك آبادي كے خصوصي نمائندہ اور وينزويلا كے صدر نكولس ماڈورو بحيثيت مہمان خصوصي اس اجلاس ميں شريك ہوں گے.

1*274**

ہميں اس ٹوئٹر لينك پر فالو كيجئے. IrnaUrdu@