القدس پر ٹرمپ کا جاہلانہ فیصلہ خطی صورتحال کو پیچیدہ کرے گا: بروجردی

تہران، 13 دسمبر، ارنا - سنیئر ایرانی رکن پارلیمنٹ نے کہا ہے کہ امریکی صدر کی جانب سے بیت المقدس کو صہیونی دارالحکومت تسلیم کرنے کا جاہلانہ اور غیر منطقی اقدام مشرقی وسطی اور خطی صورتحال کو مزید پیچیدہ کرے گا.

يہ بات مجلس (پارليمنٹ) كي قومي سلامتي اور خارجہ پاليسي كميٹي كے چيئرمين 'علا الدين بروجردي' نے منگل كے روز ايراني دارالحكومت تہران ميں ايران اور آرمينيا كے پارليماني دوستي گروپ كے سربراہ 'واہام باغداراسيان' كے ساتھ ايك ملاقات كے دوران گفتگو كرتے ہوئے كہي.

اس موقع ميں انہوں نے خطي بحرانوں كا حوالہ ديتے ہوئے امريكي صدر كے اس بيوقوفانہ اقدام پر اسلامي اور يورپي ممالك كي مخالفت كو عوام كي رائے كے ہاں ميں فلسطين كي بڑي اہميت كي علامت قرار ديا.

انہوں نے دونوں ممالك كے مابين كثيرالجہتي تعلقات كو فروغ دينے كي اہميت پر زور ديتے ہوئے كہا كہ ايران اور آرمينيا كي اقوام كے تاريخي مشتركات، دونوں ممالك كے درميان باہمي اقتصادي، سياسي اورثقافتي تعلقات بڑھانے كے ليے اچھے مواقع فراہم كر سكتے ہيں.

بروجردي نے كہا كہ دونوں ممالك كي پارليمنٹوں كے مشتركہ خصوصي كميشنوں كے درميان مسلسل مذاكرات سے تمام شعبوں سميت باہمي اقتصادي اور سيكورٹي تعلقات كو مزيد فروغ دينے ميں مدد ملے گي.

انہوں نے اسلامي جمہوريہ ايران كے خلاف انساني حقوق كي قرارداد پر آرمينيا حكومت كے منفي ووٹ كي تعريف كرتے ہوئے كہا كہ خطے اور بين الاقوامي كے مسائل پر دونوں ممالك كا مشتركہ موقف، خطي امن اور استحكام كو برقرار ركھنے ميں مدد كر سكتا ہے.

بروجردي نے صنعت، توانا‏ئي اور نقل وحمل كے شعبوں ميں باہمي تعاونوں كي وسعت دينے پر زور ديا.

اس موقع ميں واہام باغداراسيان نے ايران اور آرمينيا كے دوستانہ تعلقات پر اطمينان كا اظہار كرتے ہوئے كہا كہ ايران خطے ميں ايك اہم اور بااثر ملك ہے تو آرمينيا كي حكومت اور پارليمنٹ، ايران كے ساتھ تعلقات بڑھانے كے خواہاں ہيں.

انہوں نے خطي تنازعات ميں ايران كے مثبت موقف كو سراہتے ہوئے كہا كہ خطے ميں ايران كي متوازن پاليسي قيام امن و استحكام كا باعث بن سكتي ہے.

9410*274**

ہميں اس ٹوئٹر لينك پر فالو كيجئے. IrnaUrdu@

http://www.irna.ir/fa/News/82761347